دبئی ٹیسٹ میں پاکستان کی پوزیشن مضبوط

فوٹو: گیٹی امیجز

دبئی: پاکستان اور نیوزی لینڈ کے مابین کھیلے جا رہے دوسرے ٹیسٹ میچ  میں دوسرے دن پاکستان نے اپنی اننگز 418 رنز پر ڈیکلیئر کردی۔

کھیل کے دوسرے روز  گرین کیپس نے چار وکٹوں کے نقصان پر 207 رنز سے پہلی اننگز کو آگے بڑھایا، ابتدائی وکٹیں گنوانے کے بعد حارث سہیل اور بابر اعظم نے ذمہ دارانہ انداز میں کھیل کا آغاز کیا تو کیوی بالرز کی ایک نہ چلی۔

دوسرے روز حارث سہیل نے اپنی شاندار سنچری مکمل کی۔ وہ 147 رنز بناکر ٹرینٹ بولٹ کا نشانہ بنے۔

دوسری جانب موجود بابر اعظم نے بھی کیوی بالرز کو دن بھر مصروف رکھا، انہوں نے 127 رنز بنائے اور آؤٹ نہ ہوئے۔

418 کے مجموعی اسکور پر پاکستانی کپتان سرفراز احمد نے اننگز ڈیکلیئر کرنے کا فیصلہ کیا۔

دن کے اختتام پر نیوزی لینڈ نے بھی 24 رنز بنالیے تھے جبکہ اس کی کوئی وکٹ نہیں گری تھی۔

پہلے دن کا کھیل

گزشتہ روز کھیل کے آغاز میں قومی ٹیم نے نیوزی لینڈ کے خلاف ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا تھا۔ اوپنر بلے باز کھیل کو اچھا آغاز فراہم نہ کر سکے۔ امام الحق اور محمد حفیظ 9،9 رنز بنا کر کولن ڈی گرانڈ ہوم کی گیند کا شکار بنے۔

اظہر علی اور حارث سہیل نے اوپنر بلے بازوں کے آؤٹ ہونے کے بعد کریز سنبھالی تو تیسری وکٹ کی شراکت میں 126 رنز جوڑے۔

پاکستان کو تیسرا جھٹکا اظہر علی کی صورت میں لگا جو 81 رنز کی شاندار اننگ کھیل کر رن آؤٹ ہوئے۔ اسد شفیق صرف 12 رنز بنا کر اعجاز پٹیل کی گیند پر نیل ویگنر کو کیچ تھما بیٹھے۔

دن کے اختتام پر حارث سہیل 81 اور بابر اعظم 14 رنز کے ساتھ کریز پر موجود تھے۔

پاک نیوزی لینڈ ٹیسٹ سیریز

تین ٹیسٹ میچوں کی سیریز میں کیویز کو ایک صفر کی برتری حاصل ہے۔ قومی ٹیم دوسرے ٹیسٹ میں کامیاب ہو کر سیریز بچانے کی کوشش کرے گی۔

اس سے قبل پہلے ٹیسٹ میچ کی دوسری اننگ میں نیوزی لینڈ کی جانب سے دیے گئے 176 رنز کے ہدف کے تعاقب میں قومی ٹیم 171رنز بنا کر آؤٹ ہو گئی تھی۔

دونوں ٹیمیں اس سے قبل تین ٹی ٹوئنٹی اور تین ون ڈے میچوں میں آمنے سامنے آئیں، گرین شرٹس نے کیویز کو ٹی ٹونٹی میں وائٹ واش کیا اور ون ڈے سیریز ایک ایک سے برابر رہی۔

پاک نیوزی لینڈ ٹیسٹ سیریز، پاکستان کا پلڑا بھاری

دونوں ملکوں کے درمیان کھیلی گئی 22 ٹیسٹ سیریز میں پاکستان کا پلڑا بھاری ہے۔ پاکستان نے 13 اورنیوزی لینڈ نے صرف تین سیریز جیتی ہیں۔

دونوں ٹیموں کے مابین کھیلے گئے 55 میچوں میں سے  پاکستان نے 24 میچوں میں فتح سمیٹی اور کیویز نے 10 میچوں کا نتیجہ اپنے نام کیا جب کہ 10 میچ بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوئے۔

کین ولیم سن زیادہ تجربہ کار کپتان

قومی ٹیم کے کپتان  سرفرازاحمد نے7 ٹیسٹ میچوں میں ٹیم کی کپتانی کے فرائض سرانجام دیے ہیں جن میں سے تین میچوں میں کامیابی اور تین میں ناکامی کا سامنا کرنا پڑا۔ جبکہ ایک ٹیسٹ میچ بغیر کسی نتیجے کے ختم ہوا۔

کیوی کپتان کین ولیمسن  کا کپتانی کا تجربہ سرفراز احمد سے تھوڑا زیادہ ہے، انہوں نے اب تک17 ٹیسٹ میچوں میں کپتانی کی ہے جس میں انہیں نو میں کامیابی اور چار میچوں میں شکست کا سامنا کرنا پڑا جب کہ چار میچ ڈرا ہوئے۔

کین ولیمسن کا شمار دنیا کے ٹاپ بیٹسمیوں میں کیا جاتا ہے، ولیمسن نے65 میچوں میں 50.35 کی اوسط سے5,338 رنز بنائے ہیں۔

 

 

متعلقہ خبریں