مودی کے جنگی جنون کےخلاف بھارتی فوجیوں کی بیوائیں بھی بول پڑیں

لاشوں کی سیاست کرنے والے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کے مخالفین کے بعد اب مودی ہی کی جنگ لڑنے والے بھارتی فوجیوں کی بیوائیں بھی کہنے لگی ہیں کہ وہ جنگ نہیں چاہتیں۔

مقبوضہ کشمیر میں ہیلی کاپٹر حادثے میں مارے جانے والے بھارتی فضائیہ کے اسکواڈرن لیڈر نیناد مندوگانے کی اہلیہ ویجیتا نے بھارتی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’ہم جنگ نہیں چاہتے، آپ کو نہیں پتہ کہ جنگ میں کیا نقصان ہوتا ہے۔ اور کسی نیناد کو اب سرحد کی دونوں جانب سے رخصت نہیں ہونا چاہیے۔‘

ویجیتا تنہا نہیں ہیں جو بھارتی وزیراعظم کے جنگی جنون کی مخالفت کررہی ہیں۔

کچھ روز قبل نئی دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے مودی کو شدید تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا تھا کہ 300 سیٹوں کے لئے کتنے جوانوں، کتنے فوجیوں کو مرواؤ گے؟

ان کا کہنا تھا کہ الیکشن جیتنے کیلئے تمہیں کتنی لعشیں چاہئیں؟ کتنے جوانوں کے گھر برباد کرو گے؟ کتنے بچوں کو یتیم کرو گے؟ کتنی عورتوں کو بیوہ کرو گے اپنی 300 سیٹوں کیلئے۔

مودی کے ناپاک عزائم کی پول خود ان کی جماعت بھارتی جنتا پارٹی (بی جے پی) کے ایک سابق رکن کھول دی۔

مزید پڑھیں: سابق بھارتی ائیر وائس مارشل کی بھی بھارت پر تنقید

بھارتی میڈیا کے مطابق ادی ڈانڈیا نے یہ الزام لگایا کہ ‎‏پلوامہ حملہ بی جے پی نے الیکشن جیتنے کیلیےکروایا اور اپنے دعوے کی سچائی کے لیے بی جےپی رہنماؤں کی مبینہ آڈیو ٹیپ بھی سامنے لے آئے۔

آڈیو ٹیپ میں بی جے پی کے تین اہم رہنماؤں کی مبینہ گفتگو موجود ہے جس میں بی جے پی کے رہنما امیت شاہ اور وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ بھی شامل ہیں۔

سابق وزیراعظم من موہن سنگھ نے بھی پاک بھارت کشیدگی پر بیان دیتے ہوئے کہا کہ خود کو تباہی میں نہ جھونکیں۔ دونوں ملک غربت، صحت جیسے مسائل پر توجہ دیں۔

بھارتی خفیہ ایجنسی را کے سابق سربراہ اے ایس دلت نے کہا کہ پاکستان سے ہر حال میں مذاکرات ہی کرنے ہوں گے اس کے سوا کوئی چارہ نہیں۔ عمران خان حقیقت پسند اور سمجھدار شخص ہیں۔

متعلقہ خبریں