انٹرنیٹ نے 30 سالوں میں طویل سفر طے کیا

March 14, 2019

تیس سال قبل دنیا کا پہلا ویب پیچ دیکھنے میں بے رنگ تھا جس میں نہ تصاویر تھیں نہ ویڈیوز اور نہ ہی گرافکس لیکن اس بے رنگ آغاز کے بعد ویب نے ایسی بلندیاں چُھوئیں کہ دنیا بھر سے لاکھوں لوگوں کی توجہ حاصل کرلی۔

مارچ انیس سو نواسی میں ورلڈ وائڈ ویب کی بنیاد ٹم برنز لی نے رکھی جو کہ برطانوی انجینیئر تھے، ٹم نے معلومات کی ترسیل کا ایک ایسا منصوبہ پیش کیا جس کے تحت ڈیٹا اور فائلز ایک دوسرے کے ساتھ شیئر کی جاسکتی تھیں۔

جسے انہوں نے ہائپر ٹیکسٹ ٹرانسفر پروٹوکول  کا نام دیا جو کہ ایچ ٹی ٹی پی بھی کہلاتا ہے۔

ورلڈ وائڈ ویب کی تخلیق یورپ میں ایک جوہری تحقیق کے ادارہ میں کی گئی۔ ٹم برنرز لی نے ویب کو پہلی مرتبہ نیکسٹ کمپیوٹر پر استعمال کیا۔

انیس سو اکیانوے میں اسے عوام کے استعمال کے لئے پیش کیا گیا۔ ویب کے اولین ورژن سُست، بھاری اور دیکھنے میں غیر دلچسپ ٹیکسٹ کے حامل تھے جو سرمئی ڈبوں میں دکھائی دیتے اور اس وقت کوئی سرچ انج نہیں ہوا کرتا تھا۔

اس بے لطف آغاز کے بعد ویب نے نفاست کی بلندیاں چُھوئیں اور وکی پیڈیا، گوگل، فیس بک اور ان گنت دوسرے صفحات بنائے گئے۔

وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اس میں جدت آتی گئی اور آج انٹرنیٹ ہماری زندگی کا لازمی جزو بن چکا ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز