لاڑکانہ : 13 بچوں میں ایچ آئی وی ایڈزکے جراثیم پائے جانے کا انکشاف

سندھ میں ایڈز: پاکستان کی عالمی ادارہ صحت سے تعاون کی اپیل

لاڑکانہ: صوبہ سندھ کے شہر لاڑکانہ کے 13 بچوں کے خون کے نمونوں میں ایچ آئی وی ایڈزکے جراثیم پائے جانے کا انکشاف ہوا ہے، بچوں کی عمریں 4 ماہ سے 8 سال تک ہیں۔

لاڑکانہ کے علاقے رتو ڈیرو سے گزشتہ ایک ماہ میں 16 بچوں کے خون کے نمونے  تشخیص کے لیے بھیجے گئے۔ بچوں کے خاندانی ذرائع کے مطابق  بچے مسلسل بخار کی حالت میں تھے اور ان کا بخار نہیں اتر رہا تھا جس کے بعد ان بچوں کے خون کے نمونے لیے گئے۔

پیپلز پرائمری ہیلتھ کیئر انیشیئٹو (پی پی ایچ آئی) کے انچارج ڈاکٹر عبد الحفیظ نے تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ 16 میں سے 13 بچوں میں وائرس کی تصدیق ہوگئی ہے جن کی عمریں 4 ماہ سے 8 سال تک ہیں۔ مذکورہ بچوں کے والدین کے بھی ٹیسٹ کروائے گئے تھے جو نیگیٹو آئے ہیں۔ دیگر سیمپلز کے الائیزہ ٹیسٹ کے بعد حتمی رپورٹ دی جائے گی . 

ڈاکٹر عبدالحفیظ نے کہاہے کہ پی پی ایچ آئی لیب کے  پیتھالوجسٹس اس سلسلے میں کل میڈیا کو بریفنگ دینگے۔ میڈیا بریفنگ میں ایڈز متاثرہ بچوں کے والدین بھی شامل ہونگے۔ ڈی جی ہیلتھ سندھ کو بچوں میں ایڈزسے متعلق رپورٹ بھجوائی جائے گی۔ 

ڈاکٹر عمران نے ہم نیوز کو بتایا کہ  گزشتہ دو ہفتوں میں ایڈز سے متاثرہ 5 بچے جاں بحق بھی  ہو چکے ہیں۔ پانچوں بچوں کا تعلق رتودیرو شہر اور گرد و نواح کے دیہی علاقوں سے ہے۔ جانبحق ہونے والوں کی عمریں 6 ماہ سے 3 سال تک ہیں۔یڈز سے متاثرہ جانبحق ہونے والوں بچوں میں 6 ماہ کا عزاد حسین، 6 ماہ کا رازق کھوکھر، ڈیڑھ سال کی جویریہ،3 سال کا غلام نبی اور طاہر بوزدار شامل ہیں۔ آج ایڈز کے مزید دو کیس پازیٹیو آئے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق 2 سال قبل بھی لاڑکانہ میں ہی اچانک ایچ آئی وی کے 49 مریض سامنے آئے تھے جس کی وجہ بعد ازاں ڈائی لیسس مشین نکلی۔

لاڑکانہ کے چانڈکا میڈیکل کالج اور اسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ کے مطابق ڈائی لیسس کرنے سے پہلے مریضوں کے ہیپاٹائیٹس اور ایڈز کے ٹیسٹ لیے جاتے ہیں اور رپورٹ مثبت آنے پر کسی ایک مخصوص ڈائی لیسس مشین پر ہی ایسے مریضوں کا ڈائی لیسس کروایا جاتا ہے تا کہ یہ وائرس کسی دوسرے مریض میں منتقل نہ ہو۔

تاہم اسپتال میں موجود 20 سے زائد ڈائی لیسس مشینوں میں سے 4 مشینیں خراب تھیں جب کہ ہیپاٹائیٹس اورایڈز کے مریضوں کے لیے علیحدہ مشینوں کا انتظام نہ ہونے کے باعث دیگر مریضوں میں بھی یہ وائرس پھیل گئے۔

خیال رہے کہ نیشنل ہیلتھ سروسز کی رپورٹ کے مطابق ملک میں ڈیڑھ لاکھ افراد ایڈز میں مبتلا ہیں، ایڈز سے متاثر سب سے زیادہ افراد پنجاب میں ہیں جہاں مریضوں کی تعداد 75 ہزار تک پہنچ گئی ہے۔

یہ بھی پڑھیے:ملک بھر میں ایڈز کے مریضوں کی تعداد ڈیڑھ لاکھ تک پہنچ گئی

ایڈز سے متاثرہ افراد کے لحاظ سے سندھ دوسرے نمبر پر ہے جہاں 60 ہزار افراد ایڈز میں مبتلا ہیں جبکہ بلوچستان اور خیبر پختونخواہ میں ایڈز کے مریضوں کی تعداد 15، 15 ہزار ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز