منظم جرائم اور دہشت گردی روکنے کیلئے عالمی کوششوں کی ضرورت ہے،ملیحہ لودھی

کشمیر:سلامتی کونسل کو انسانی حقوق کی خلاف ورزیاں رکوانا ہونگی،ملیحہ لودھی

فوٹو: فائل

اقوام متحدہ میں  پاکستان کی مستقل مندوب ڈاکٹرملیحہ لودھی نے کہاہے کہ منظم جرائم اور دہشت گردی روکنے کےلیے عالمی کوششوں کی ضرورت ہے۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل سے خطاب میں ڈاکٹر ملیحہ لودھی نے کہا کہ پاکستانی سیکیورٹی اداروں نے محدودوسائل میں انسدادمنشیات میں اہم کرداراداکیاہے۔ جرائم دہشت گردگرپوں کی معاونت کااہم ذریعہ ہیں،عالمی برادری کو خطرات سے نمٹنے کےلیے منظم منصوبہ بندی کرنا ہوگی۔

ڈاکٹر ملیحہ لودھی نے کہا کہ باہمی تعاون اور معلومات کے تبادلے سے منظم جرائم اور دہشت گردی روکی جاسکتی ہے۔

رواں سال مارچ میں  ڈاکٹر ملیحہ لودھی نے سلامتی کونسل ہی میں خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ انسداد دہشت گردی کی عالمی حکمت عملی میں غاصبانہ تسلط اور مقبوضہ علاقوں کی حق خودارادیت کے انکار سے جنم لینے والی صورتحال پر بھی توجہ دینی چاہیے۔

سلامتی کونسل میں دہشت گردی کی روک تھام پر منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہمیں دہشت گردی کی علامات سے نہیں بلکہ وجوہات سے نبردآزما ہونے کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر ملیحہ لودھی نے زور دے کر کہا کہ عالمی برادری کو کشمیر میں جاری بربریت اور ریاستی دہشت گردی پر بھی توجہ دینی چاہیے۔

پاکستان کی اقوام متحدہ میں مستقل مندوب نے واضح کیا کہ اقوام متحدہ کے دہشت گردی کی روک تھام کرنے والے اداروں کو چند ممالک کے سیاسی مفادات کے فروغ کا آلہ کار نہیں بننا چاہیے۔

پاکستان کی مستقل مندوب  ڈاکٹر ملیحہ لودھی نے کہا کہ پاکستان میں قومی ایکشن پلان کے ذریعے انسداد دہشت گردی کی مربوط اور جامع پالیسی بنائی گئی ہے۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ پاکستان نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں خاطر خواہ کامیابیاں حاصل کی ہیں۔

اقوام متحدہ میں پاکستان کی مستقل مندوب ڈاکٹر ملیحہ لودھی نے سلامتی کونسل میں دہشت گردی کی روک تھام پر منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گرد تنظیموں کی مالی معاونت اور دیگر کاروائیاں روکنے کے لیے قومی اداروں کو مزید فعال اور مضبوط بنایا گیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے: علامات سے نہیں وجوہات سے نمٹنے کی ضرورت ہے،ملیحہ لودھی

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز