کرکٹ ورلڈ کپ فائنل ، قسمت کا کھیل

کوئی شک نہیں  کرکٹ  ورلڈ  کپ  کا  فائنل  دنیا  کی  دو  بہترین  ٹیموں  کے  درمیان  کھیلا  گیا  مگر  کہتے  ہیں  نہ  جب  قسمت  مہربان  ہو  تو جتنی  بھی  بڑی  رکاوٹ  ہو  کامیابی  اپنا  راستہ  بنا  ہی  لیتی  ہے۔  جی  ہاں  ایسے  ہی  کچھ  ہوا  لارڈز  کے  تاریخی  میدان  پر  ہونیوالے  سنسنی  خیز اور  اتار  چڑھاؤ  سے بھرپور  دلچسپ  میچ  میں  جہاں  فتح  کا  سہرا  انگلش  ٹیم  کے  سر سجا۔

بات  شروع  ہوئی  کیوی  بیٹسمین  راس  ٹیلر  کے  غلط  آؤٹ  سے جب  وہ  پندرہ  رنز  پر  کھیل  رہے  تھے  کہ  مارک  ووڈ  کی  گیند  پر  انہیں  جنوبی  افریقن  امپائر  مارس  آریزمس  نے  ایل  بی  ڈبلیو  آوٹ  قرار  دے  دیا۔

حالانکہ  ہاک  آئی  میں  گیند  وکٹوں  سے  اوپر  جاتی  دیکھائی  دی ۔ اس  وقت  نیوزی  لینڈ  کا  اسکور  ایک  سو  اکتالیس  رنز  تھا  اور  اس  وکٹ  کے  ساتھ  بلیک  کیپس  کے  چار  کھلاڑی  پویلین  لوٹ  گئے  تھے۔

قسمت  کی  دیوی  ایک  بار  پھر  انگلش  ٹیم  پر تب مہربان  ہوئی  جب  انچاسویں  اوور  کی  چوتھی  گیند  پر  بین  اسٹاکس  نے  ڈرامائی  چھکا  لگا دیا ، جمی  نیشم  کی  گیند  پر  بین  اسٹاکس  کی  شاٹ  مڈ وکٹ  باونڈری  پر  موجود  فیلڈر  ٹرینٹ  بولٹ  کے  ہاتھ  میں  گئی  مگر  بدقسمتی  سے  وہ  اپنا  توازن  کھو  بیٹھے  اور  کیچ  پکڑنے کے  ساتھ  باؤنڈری  سے  بھی  باہر  نکل  گئے  جسے  چھکا  قرار دیا  گیا۔

ہدف  کے  تعاقب  میں  آخری  اوور  کی  چوتھی  گیند  پر  تو  وہ  ہوا  جس  کا  کسی  نے  سوچا  بھی  نہیں  تھا ، انگلینڈ  کو  میچ  جیتنے  کے  لیے  تین  گیندوں  پر  نو  رنز  درکار  تھے ، ٹرینٹ  بولٹ  کی  گیند  پر  بین  اسٹاکس  نے  مڈوکٹ  باؤنڈری  کی  طرف  شاٹ  کھیلی  جسے  وہاں  موجود  فیلڈر  مارٹن  گپٹل  نے  فیلڈ  کیا۔

کیوی  فیلڈر  نے  تھرو  وکٹ  کیپر  اینڈ  پر ماری تو  گیند  بین  اسٹاکس  کو  لگ  کر  باؤنڈری  لائن  پار  کر گئی  اور  نیوزی  لینڈ  کو اوور  تھرو  پر  چھ  رنز  دے  دیے  گئے  جو  نیوزی  لینڈ  کی  پھوٹی اور روٹھی  قسمت  کا  منہ  بولتا  ثبوت  بھی  تھا۔

میچ  ٹائی  ہونے  کے  بعد  سپر  اوور  میں  بھی  خوش قسمتی  نے  انگلینڈ  کی  ٹیم  کا  ساتھ  نہ  چھوڑا، آخری  لمحات  میں  ایک  پل  نیوزی  لینڈ  کے  نام  بھی  رہا  جب  جیسن  روئے  نے  مس  فیلڈنگ  کر کے  اضافی  رن  کیوی  ٹیم  کے  کھاتے  میں  ڈال  دیا مگر تب  تک  بہت  دیر  ہو چکی  تھی ۔

نیوزی  لینڈ  کو  میچ  جیتنے  کے  لیے  سولہ  رنز  درکار  تھے اور  پہلی  پانچ  گیندوں  پر  بلیک  کیپس  نے چودہ  رنز  اسکور  کرلیے  تھے،آخری  گیند  پر  جیت  کے  لیے  مزید  دو  رنز  چاہیے تھے  لیکن  سٹرائیک  پر  موجود  مارٹن  گپٹل  بڑی  ہٹ  نہ  لگا  سکے، گپٹل نے ڈیپ مڈ وکٹ کی طرف شارٹ کھیلی، ایک رنز لینے میں بھی کامیاب ہوئے تاہم دوسرے رنز کی کاوش میں بدقسمتی ان کی راہ میں اس وقت حائل ہو گئی جب  پہلے مس فیلڈ کرنے والے  جیسن روئے کا نشانہ اب کی بار خطا نہ ہوا، روئے کی بروقت تھرو پکڑ کر انگلش کیپر بٹلر نے دوسرے رنز کوشش میں بھاگتے گپٹل کو رن آوٹ کر ڈالا۔

میچ  ویسے  تو  برابر  ہو گیا  لیکن  زیادہ  باؤنڈریز  کے  قانون  کے  باعث  انگلینڈ  فاتح  ٹھہرا ،یوں  پہلی بار  کرکٹ کی تاریخ میں برطانیہ نے حکمرانی کا تاج پہن لیا،نیوزی لینڈ کے لئے بزبان شاعر یہی الفاط باقی رہ جاتے ہیں کہ

کہیں تم اپنی قسمت کا لکھا تبدیل کر لیتے،تو شاید ہم بھی اپنا راستہ تبدیل کر لیتے

یہ بھی پڑھیے: ورلڈ کپ: نیوزی لینڈ کو ہراکر انگلینڈ نیا عالمی چیمپئن بن گیا

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز