شادی کے لیے بادشاہت چھوڑنے والے بادشاہ کی بیوی نے طلاق لے لی

سنگاپور: ملائیشیا کے سابق بادشاہ سلطان محمد پنجم نے ایک سال قبل خود سے 23 سال چھوٹی روسی حسینہ سے شادی کرنے کے لیے بادشاہت ٹھکرادی تھی لیکن اب ان سے روسی حسینہ نے علیحدگی اختیار کرنے کا اعلان کردیا ہے۔ اس طرح سابق بادشاہ کی زندگی سے تاج و تخت کے بعد کالی زلفوں والی حسینہ بھی نکل گئی ہے۔

تھائی لینڈ: بادشاہ نے ذاتی سیکیورٹی گارڈ کو شاہی ملکہ بنا لیا

51 سالہ بادشاہ سے شادی کے لیے اوکسانا نے اسلام قبول کر لیا تھا جس کے بعد ان کا نام ریحانہ اوکسانا پیٹرا رکھا گیا تھا۔ ایک سال قبل ہونے والی شادی کے نتیجے میں ان کا ایک بیٹا بھی ہے جو مئی میں پیدا ہوا تھا۔ اس بچے کا نام اسماعیل لاین رکھا گیا تھا۔

عالمی ذرائع ابلاغ کے مطابق ریحانہ اوکسانا نے بیٹے کی پیدائش کے چند ہفتے بعد ہی طلاق کی کاپی سلطان کو بھیج دی تھی۔ ریحانہ اوکسانا کی جانب سے اٹھائے گئے اس قدم پر لوگوں کی بڑی تعداد نے سخت نکتہ چینی کی ہے۔

خبررساں ادارے کے مطابق سلطان محمد اور ریحانہ اوکسانا نے طلاق کے لیے سنگاپور میں رجسٹرڈ کرایا تھا۔ اس ضمن میں کارروائی 22 جون سے یکم جولائی تک ہوئی جس کے بعد اب دونوں علیحدہ ہو رہے ہیں۔

سلطان محمد کے بادشاہت چھوڑنے کے بعد پہنگ اسٹیٹ کے سلطان عبداللہ احمد شاہ کو نیا بادشاہ بنایا گیا تھا۔ انہوں نے سلطان محمد پنجم کی جگہ لی تھی۔

برطانیہ کے ایڈورڈ ہفتم نے1936 میں غیر شاہی خاندان کی لڑکی سے شادی کرنے کے لیے تاج و تخت چھوڑ دیا تھا اور سوئزرلینڈ چلے گئے تھے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز