وزارت مذہبی امور نے ایران، عراق اور شام کی زیارتوں کی پالیسی پر کام شروع کردیا

اسلام آباد:وزارت مذہبی امور نے ایران، عراق اور شام کی زیارتوں کی پالیسی پر کام شروع کردیاہے۔ زیارت پالیسی کے تحت حج عمرہ کی مانند ٹوور آپریٹرز ماڈل برائے زائرین تیار کی جائے گی،زیارت پالیسی کی حج 2019 کے بعد کابینہ سے منظوری لی جائے گی۔ 

وزارت مذہبی امور کے ذرائع کا کہناہے کہ پالیسی مرتب کرنے کا فیصلہ وفاقی وزیر مذہبی امور پیر نور الحق قادری کی زیر صدارت  اجلاس میں ہوا۔اجلاس میں شعیہ علماء نے بھی شرکت کی۔ اجلاس میں وزیر اعظم کے مشیر برائے اوورسیز پاکستانی زلفی بخاری  نے بھی خصوصی شرکت کی ۔

اجلاس میں ایران اور عراق زیارتوں کی پالیسی کے خدوخال پر ایڈیشنل سیکرٹری وزارت مذہبی امور نے بریفنگ دی۔

اجلاس کے شرکاء کو بریفنگ میں بتایا گیاہے کہ زیارات میں حضرت امام رضا، حضرت امام حسین، امام عبدالقادر جیلانی، امام ابو حنیفہ، بہاالدین نقشبندی بخاری اور امام مجتبی مزارات شامل ہیں۔

وزارت مذہبی امور کے حکام نے اجلاس کے شرکاء کو بتایا کہ محرم کے دوران ہر سال 60ہزار سے ایک لاکھ زائرین ایران عراق جاتے ہیں۔ ایک سال میں تقریبا 6 لاکھ سے زائد زائرین ایران عراق جاتے ہیں۔

اس موقع پر پیر نور الحق قادری نے کہا کہ اس سال ایران، عراق زائرین کے لئے محرم سے قبل کابینہ سے منظوری لی جائے گی، شعیہ علماء کے ساتھ ملکر زیارات پالیسی مرتب کریں گے۔

وفاقی وزیر برائے مذہبی امور نے کہا کہ امسال زائرین حج عمرہ کی مانند زیارات پر جائیں گے،زائرین مکمل سہولیات اور سیکورٹی فراہم کرے گی۔

شعیہ علماء میں علامہ راجہ ناصر عباس، علامہ امین شہیدی، علامہ عارف واحدی اور غضنفر مہدی کے علاوہ  پارلیمانی سیکرٹری جہانگیر آفتاب اور وفاقی سیکرٹری محمد مشتاق احمد نے شرکت کی۔

یہ بھی پڑھیے: حجاج کرام کے لیے تحفہ : مفت سم کارڈز اور انٹرنیٹ کی سہولیات

زائرین حج و عمرہ کے لیے خوشخبری: ’لو‘ سے بچاؤ کا آلہ ایجاد ہو گیا

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز