کشمیریوں سے یکجہتی، 12بجے کھڑے کیسے ہوں گے؟

کشمیریوں سے یکجہتی، 12بجے کھڑے کیسے ہوں گے؟

فائل فوٹو

اسلام آباد: وزیراعظم پاکستان عمران خان کی جانب سے کشمیریوں کیساتھ اظہار یکجہتی کے اعلان پر پارٹی رہنماؤں نے ایک دوسرے پر تنقید شروع کردی ہے۔

کراچی سے پاکستان تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی ڈاکٹرعامر لیاقت حسین نے مشیر اطلاعات فردوس عاشق اعوان کے طرز بیان کو تنقید کو نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ درخواست اور حکم میں فرق ملحوظ خاطر رکھیں۔

عامر لیاقت نے ٹوئٹر پر لکھا کہ’’ عمران خان نے کہا جمعے کے روز 12 بجے سے 12:30 کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کرنا ہے یہ(فردوس اعوان) فرماتی ہیں کہ جو جہاں موجود ہو وہ3 منٹ کے لیے 12 بجے کھڑا ہوجائے، بات کرنے کا کوئی طریقہ ہوتا‘‘۔

ایک لائیو شو میں انہوں نے کہا کہ 12 بجے کوئی کسی بھی جگہ موجودہ ہوسکتا ہے وہ اچانک کیسے کھڑا ہو جائے گا۔

عامرلیاقت نے ٹویٹ کیا کہ ’آج مجھے خوشی محسوس ہورہی ہے کہ فردوس عاشق اعوان کو ان فالو کیاتھا، بے ہنگم گفتگو، تسلسل سے مسلسل فضول الفاظ کی دھول، عمران خان کی ہدایات کے برعکس فردوسی بیانات کی یلغار، تنگ کر کے رکھا ہوا ہے پوری قوم کو‘۔

پی ٹی رہنما نے مشیر اطلاعات کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ پی ٹی وی میں سنگین بے قاعدگیوں کو تحفظ دینے کے سوا فردوس عاشق اعوان کوکیا ٓتاہے؟

آصف راڈو نے رمضان المبارک میں 50 روپے کا افطار باکس 250 میں دیا انہیں بتایا گیا، خاور اظہر کی خلاف ضابطہ تقرری، امین اختر اور عمیر معصوم کو ہیوی پیکچ پر مارکیٹنگ سونپنا, محترمہ کو کچھ نظر نہیں آتا’

دوسری جانب ڈاکٹر فردوس اعوان نے کہا ہے کہ کوئی اپنے گراؤنڈز سے باہر کھیلے گا تو اقدامات اٹھائے جائیں گے۔

انہوں نے بتایا کہ وزیراعظم نے نعیم الحق کو ڈسپلنری معاملات دیکھنے کا ٹاسک سونپ دیا ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز