انٹرنیٹ ٹریفک مانیٹرنگ ٹھیکے کا معاملہ: سیکیورٹی اداروں کے حکام طلب

اسلام آباد: سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے کابینہ سیکرٹریٹ نے پی ٹی اے کی جانب سے غیر ملکی کمپنی کو انٹرنیٹ ٹریفک مانیٹرنگ کا ٹھیکہ دینے کے معا ملے پر سیکیورٹی اداروں کے  حکام کو طلب کر لیا ہے۔

قائمہ کمیٹی نے پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اٹھارٹی کی جانب سے مبینہ طور پراسرائیلی خفیہ ایجنسی کے ساتھ کام کرنیوالی غیر ملکی کمپنی کو انٹرنیٹ ٹریفک مانیٹرنگ کا ٹھیکہ دینے کا معاملہ اٹھایا۔

چیٔرمین پی ٹی اے نے ممبران کو غیر ملکی کمپنی سے ہونے والے معاہدے سے متعلق بریف کیا۔

چئرمین قائمہ کمیٹی سینٹر طلحہ محمود نے کہا کہ حساس اداروں سے  اس معاہدے سے متعلق رائے لی جائے گی،  اس معاملے پر چئرمین پی ٹی اے کی بریفنگ سے مطمئن نہیں ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: پی ٹی اے نے 9 لاکھ 41 ہزار ویب سائٹس بلاک کر دیں

انہوں نے کہا کہ چاہتے ہیں حقائق عوام اور میڈیا کے سامنے لائے جائیں۔ اب تک متعلقہ کمپنی کو کروڑوں روپے کی ادائیگیاں کی جاچکی ہیں، ہمیں اس معاملے پر انتہائی احتیاط سے کام لینا ہوگا۔

سینٹر طلحہ محمود  نے کہا کہ جس کمپنی کے ساتھ  معاہدہ ہوا  ہے وہ  بلواسطہ طور پر اسرائیلی خفیہ ایجنسی کے ساتھ منسلک ہے جس پر سنگین الزامات ہیں۔

کمیٹی نے پی ٹی اے سے معاہدے کے زمہ داران کی تفصیلات طلب کرتے ہوئے اجلاس 26 ستمبر تک ملتوی کردی۔

 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز