سابق رکن صوبائی اسمبلی پروین سکندر گل کا قاتل اسکا ملازم نکلا

لاہور:مسلم لیگ ق کی سابق رکن صوبائی اسمبلی پروین سکندر کے قتل کیس میں اہم پیش رفت سامنے آ گئی۔ پولیس کے مطابق پروین سکندرگل کو ان کے سابق ملازم نے قتل کیا۔

لاہور پولیس کا کہنا ہے کہ ملزم کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔ ملزم سے تفصیلی تفتیش کے بعد ہی قتل کے اصل محرکات سے متعلق علم ہو سکے گا۔

مسلم لیگ ق کی رہنما اور سابق رکن صوبائی اسمبلی پروین سکندر لاہور کے علاقے نصیر آباد میں واقع اپنے گھر میں مردہ حالت میں پائی گئی تھیں۔

ابتدائی رپورٹ کے مطابق حملہ آور نے رسی سے گلا گھونٹ کر انہیں قتل کیا تھا، مقتولہ کے قتل کے ایک دن پہلے کی ویڈیو سامنے آئی تھی۔

ویڈیو میں مقتولہ پروین سکندر نے اپنی بھیتجی کو اپنے خدشات سے آگاہ کیا تھا۔

بارہ ستمبر کو سابق ایم پی اے پروین سکندر کی پوسٹ مارٹم رپورٹ میں بتایا گیا کہ پروین سکندر گل کی موت سر پر آہنی ہتیھیار سے کئے جانے والی دو ضربوں کے باعث ہوئی۔ملزم نے مقتولہ کے ہاتھ پاؤں بھی باندھ دئیے تھے۔

واضح رہے کہ مقتولہ کی قتل سے چند گھنٹے قبل ریکارڈ کی گئی ویڈیو بھی کچھ روز قبل منظر عام پر آئی تھی۔

ویڈیو میں پروین سکندر گل نے اہم رازوں سے پردہ پردہ اٹھاتے ہوئے گھر میں ہونے والی وارداتوں سے متعلق اہم انکشافات کئے۔

سابقہ ایم پی اے پروین گل نے وڈیو میں انکشاف کیا کہ ان کے گھر میں چوری کی چار وارداتیں ہوئی ہیں۔ نامعلوم چور چار وارداتوں میں 35 ہزار ڈالر ، 2 لاکھ نقدی اور لائینسی اسلحہ لوٹ کر گئے  ہیں۔

پروین سکندر گل نے ویڈیو میں گھر کا نقشہ بھی بتایا اور نامعلوم چوروں کے اسکے کمرے میں آنے والے راستوں کی بھی نشاندہی کی ۔انہوں نے وڈیو میں انکشاف کیا کہ چوروں نے سوتے ہوئے کٹر سے جیب کاٹ کر 22 ہزار روپے نکالے ۔

وڈیو میں انہوں  نے گھر میں داخل ہونے والے دروازے پر لاک نہ ہونے کا بھی اشارہ دیا اوردیوار میں موجود اے سی کے سوراخ کی بھی نشاندہی کی  اور بتایا کہ  اے سی کے سوراخ کو بند کرنے کے لئے فریج لگا رکھی تھی۔

مقامی پولیس افسر سرفراز اسلم نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو بتایا کہ  مقتولہ پرین سکندر گل چوری کی وارداتوں کی خود تفتیش کررہی تھیں ۔  انہوں  نے چور کو پکڑنے کے لئے سی سی ٹی وی کیمرے بھی لگوائے ۔

یاد رہے کہ چندر روز قبل خاتون رکن صوبائی اسمبلی کو قتل کر دیا گیا تھا، پروین سکندر گل سابق صدر پرویز مشرف کے دور میں  مسلم لیگ ق کے ٹکٹ پر ایم پی اے منتخب ہوئی تھیں، وزیراعلی پنجاب سردار عثمان بزدار نے نے آئی جی سے واقعہ کی رپورٹ طلب کر لی تھی۔

پولیس  کہنا ہے کہ نصیر آباد کے علاقے میں نامعلوم افراد نے گھر میں گھس کر پروین سکندر گل کو قتل کیا، بھائی صابر گل نے کمرے کے دروازے توڑ کر ان کی لاش نکالی، مقتولہ کے ہاتھ اور پاوں رسیوں سے بندھے ہوئے تھے۔

مقتولہ کے بھائی صابر گل نے ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو بتایا کہ  پہلے کبھی نہیں ہوا کہ انکا فون بند ہو جب میں نے  دروازے  کوتوڑ کر دیکھا تو وہ اندر مردہ حالت میں تھیں۔

واقعے کی اطلاع ملتے ہی وزیر قانون پنجاب اور سابق ایم پی اے آمنہ الفت مقتولہ کے گھر پہنچ گئے، راجہ بشارت نے متعلقہ اداروں کو جلد تحقیقات مکمل کرنے کی ہدایت کر دی۔

سابق ایم پی اے آمنہ الفت نے کہا کہ  سابق رکن صوبائی اسمبلی پروین اخترکافی دنوں سے پریشان تھیں انہوں نے بتایا کہ ان کے گھر سےچوری کی وارداتیں بھی ہوچکی ہیں۔

یہ بھی پڑھیے: سابق رکن  پنجاب اسمبلی پروین سکندرگل کی پوسٹ مارٹم رپورٹ آگئی

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز