مولانا فضل الرحمان سے مذاکرات کے لیے7 رکنی حکومتی کمیٹی تشکیل

اسلام آباد: وزیر اعظم کی ہدایت پر وزیردفاع پرویز خٹک نے جمیعت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ فضل الرحمان سے آزادی مارچ رکوانے کے لیے 7 رکنی حکومتی مذاکراتی کمیٹی تشکیل دےدی۔

ذرائع کے مطابق حکومتی کمیٹی میں اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر ، چیئرمین سینٹ صادق سنجرانی، وزیر تعلیم شفقت محمود، وزیر مزہبی امور نور الحق قادری، رکن قومی اسمبلی اسد عمر اور اسپیکر پنجاب اسمبلی پرویز الہی شامل ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: مولانا کو آزادی مارچ کی اجازت ضلعی انتظامیہ دے گی

ذرائع کے مطابق حکومتی کمیٹی دیگر اپوزیشن جماعتوں سے بھی رابطہ کرے گی۔
ہم نیوز بات چیت کرتے ہوئے چیُرمین سینٹ صادق سنجرانی نے مذاکراتی کمیٹی میں شامل ہونے کی تردید کردی۔

دریں اثناء پرویز خٹک  نے کہا ہے کہ ملک کسی طور پر سیاسی افراتفری کا متحمل نہیں ہوسکتا۔

انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کے ساتھ افہام و تفہیم اور بات چیت کے ذریعے معاملات حل کیے جائیں گے۔ ملک کو اس وقت اتحاد اور یکجہتی کی ضرورت ہے۔

وزیر دفاع  کا کہنا تھا کہ کشمیر کے مسئلے پر پوری قوم کو اکٹھا ہونے کی ضرورت ہے۔ کشمیری عوام پاکستان کی طرف دیکھ رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کمیٹی کو اپوزیشنن سے بات چیت کا اختیار دیا گیا ہے۔ کمیٹی کسی بھی سیاسی انتشار سے بچنے کے لئے اپوزیشن سے مذاکرات کرے گی۔

 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز