’مولانا صاحب! مسترد ہونے پر انتقام قوم کو اذیت سے دوچار کرکے نہ لیں‘

تحریک آزادی کشمیر کو روکنے کی ہر بھارتی سازش دم توڑ رہی ہے۔ فردوس عاشق

اسلام آباد: معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان کو ضد اور ہٹ دھرمی چھوڑتے ہوئے 1973 کے آئین کے تناظر میں جمہوریت اور آئینی اصولوں کی پاسداری کرنے کا مشورہ دے دیا۔

اپنے ٹوئٹر پیغام میں مولانا فضل الرحمان کو مخاطب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عوام سے مسترد ہونے پر ذاتی انتقام کا بدلہ قوم کو ذہنی اذیت سے دوچار کرکے نہ لیں اور کارکنان کو یخ بستہ ہواؤں کی نذر کر کے ظلم نہ کریں۔

فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ مذاکرات جمہوری عمل کا نام ہے جس کے آپ خود داعی رہے ہیں۔

ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ مذاکرات کو بے معنی قرار دے کر اپنے ذہن کی کھڑکیوں کوکیوں بند رکھنا چاہتے؟ وہم کا علاج لقمان حکیم کے پاس بھی نہیں تھا۔

جے یو آئی (ف) کے سربراہ کو مخاطب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ انتخابات میں اگر دھاندلی ہوئی تھی تو آپ نے صدر کا الیکشن کیوں لڑا تھا؟ اور آپ کے صاحب زادے نے ایم این اے کا حلف کیوں اٹھایا تھا؟

فردوس عاشق اعوان نے مزید کہا کہ ایک سال بعد دھاندلی کا واویلا عوام کو گمراہ اور جمہوری نظام کو کمزور کرنے کے سوا کچھ نہیں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز