صدارتی آرڈیننس کیخلاف درخواست دائر

الیکشن کمیشن ممبران کی تعیناتی کیلئے حکومت کو10دن کی مہلت

اسلام آباد: مسلم لیگ(ن) نے صدارتی آرڈیننسز کے خلاف اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کر دی ہے۔

حزب اختلاف کی سب سے بڑی جماعت نے اپنی درخواست میں صدر پاکستان، سیکرٹری پارلیمنٹ، سیکرٹری سینٹ، وزیراعظم کے پرنسپل سیکرٹری اور سیکرٹری وزارت قانون کو بھی فریق بنایا گیا۔

ن لیگ نے صدارتی آرڈیننس کے ذریعے قوانین رائج کرنے کا اقدام چیلنج کیا ہے۔ درخواست میں موقف اپنایا گیا ہے کہ پارلیمنٹ کی موجودگی میں آرڈیننس جاری کرنا آئین کی خلاف ورزی ہے۔

درخواستگزار نے استدعا کی ہے کہ عدالت حکومت کو پارلیمنٹ کی تعظیم برقرار رکھنے کا حکم دے۔

خیال رہے کہ حکومت نے حال ہی میں 9 آرڈیننس قومی اسمبلی سے پاس کرائے ہیں جن پر اپوزیشن کی جانب سے سخت تنقید کی گئی ہے۔

حکومت نے نیا پاکستان ہاؤسنگ اینڈ ڈیولپمنٹ اتھارٹی بل 2019، طبی ٹریبونل بل 2019، پاکستان طبی کمیشن بل 2019، قومی احتساب بیورو ترمیمی بل 2019، انسداد دہشت گردی اتھارٹی ترمیمی آرڈیننس 2019 میں 120 دن کی توسیع، انسداد دہشت گری ایکٹ 1997 میں مزید ترمیم، مجموعہ ضابطہ دیوانی 1908 میں مزید ترمیم کے آرڈیننس شامل تھے۔

پاکستان کے آئین کا آرٹیکل 89 قانون سازی کے لیے آرڈینیس لانے کی اجازت دیتا ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز