مقبوضہ جموں و کشمیر میں مردم شماری آئندہ سال ہوگی

مقبوضہ کشمیر میں آج یومِ کشمیر و فلسطین منایا جا رہا ہے | humnews.pk

جموں: مقبوضہ جموں و کشمیر انتظامیہ نے کہا ہے کہ مردم شماری آئندہ برس جون سے شروع کی جائے گی۔ حکام کا کہنا ہے کہ سکول اساتذہ اس بار مردم شماری کے مشق کا حصہ نہیں ہوں گے۔

ایک سرکاری ترجمان نے ساؤتھ ایشین وائر کو بتایا کہ ‘چیف سکریٹری بی وی آر سبرامنیم نے جمعہ کے روز جموں وکشمیر میں مردم شماری 2021 کے انعقاد کے لیے تیاریوں کا جائزہ لینے کے لیے ریاستی سطح کی مردم شماری کوآرڈینیشن کمیٹی کا اجلاس منعقد کیا ہے۔  پلاننگ ڈویلپمنٹ اینڈ مانیٹرنگ محکمہ کو مردم شماری 2021 کے لیے نوڈل ڈیپارٹمنٹ نامزد کیا گیا ہے۔ ڈپٹی کمشنرزکو پرنسپل مردم شماری کے عہدے دار نامزد کیا گیا ہے۔‘

ترجمان نے کہا کہ مردم شماری میں، ان تمام افراد پر اعداد و شمار جمع کیے جاتے ہیں جو مردم شماری کے گنتی کے عرصے کے دوران ملک میں موجود ہیں۔ 2011 مردم شماری کے وقت مقبوضہ جموں و کشمیر کی کل آبادی 1.24 کروڑ تھی۔

سرکاری ترجمان کے مطابق مردم شماری کے لیے سوالنامہ کا جموں و کشمیر میں اگست اور ستمبر 2019 کے درمیان عرصہ میں پائلٹ تجربہ کیا گیا تھا۔

حکومتی ترجمان نے کہا کہ 28 ماسٹر ٹرینرز کی تربیت دسمبر 2019 کے مہینے میں جموں و کشمیر آئی ایم پی آر ڈی میں شروع ہوگی، جبکہ فیلڈ ٹرینرز کی تربیت جنوری 2020 میں شروع ہوگی اور اپریل 2020 میں انیومیٹر اور سپروائزر کی تربیت کا آغاز ہوگا۔

انہوں نے بتایا کہ گھروں کی فہرست سازی اور گھریلو مردم شماری یکم جون سے 15 جولائی 2020 کے درمیان ہوگی۔ ترجمان نے بتایا کہ اس کے علاوہ، چیف سکریٹری بی وی آر سبرامنیم نے ہدایت دی کہ اسکول اساتذہ کو مردم شماری 2021 سے دور رکھنا چاہئے اور تقریبا 30000 گنتی اور نگرانوں کو دوسرے محکموں سے تیار کرنے کی ضرورت ہے۔

یہ بھی پڑھیے : جمہوری آزادیوں کی درجہ بندی میں مقبوضہ کشمیر کا 49 واں نمبر

بھارت کی مرکزی حکومت نے 31 اکتوبر کو جموں و کشمیر کا ریاستی درجہ ختم اور اسے مرکز کے زیر انتظام علاقوں جموں و کشمیر اور لداخ میں تقسیم کیا۔اب جموں و کشمیر اور لداخ میں الگ الگ مردم شماری ہوگی۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز