چہرے پر بڑھتی جھریاں ۔۔۔ کیوں، کیسے اور حل کیا؟

اسلام آباد: ماہر جلد ڈاکٹر ارمیلا جاوید نے کہا ہے کہ گدمی رنگت کے لوگ جب دھوپ میں جاتے ہیں تو ان کا چہرہ کالا دکھتا ہے جبکہ سفید رنگت کے لوگوں کا چہرہ سرخ لگتا ہے۔

ہم نیوز کے پروگرام ’صبح سے آگے‘ میں بات کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ سفید جلد میں الٹراوائلٹ سے حفاظت کم ہوتی ہے جس وجہ سے ان لوگوں کو زیادہ جھریاں پڑنے کا خطرہ ہوتا ہے۔ اس کے برعکس گدمی رنگت کی جلد میں یہ تحفظ زیادہ پایا جاتا ہے لہذا ان لوگوں کو زیادہ جھریاں نہیں پڑتیں۔

جھریاں خواتین کو جلدی پڑتی ہیں یا مردوں کو؟

ڈاکٹر ارمیلا جاوید کا کہنا ہے کہ جلد پتلی ہونے کی وجہ سے خواتین کے چہروں پر جھریاں زیادہ جلدی پڑتی ہیں۔ مردوں کی جلد نسبتاً زیادہ موٹی ہونے کے باعث ان کے چہروں پر جھریاں دیر سے پڑتی ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اس کے علاوہ ہارمونز کے مسائل اور بچوں کی پیدائش خواتین کے چہروں پر جلد جھریاں پڑنے کی ایک بڑی وجہ ہیں۔

جھریوں سے بچنے کے لیے احتیاطی تتدابیر کیا؟

ماہر جلد کے مطابق :

1: والدین کو چاہیئے کہ چھوٹی عمر سے ہی بچوں کو سن بلاک استعمال کرنے کی عادت ڈالیں۔
2: جلد سے متعلق کسی بھی قسم کے مسئلے کو سنجیدگی سے لیں اور علاج کرائیں۔
3: شروع سے بچوں کو متوازن غذا کھلائیں اور متوازن طرز زندگی اپنانے میں ان کی مدد کریں۔

جھریاں آ جانے کی صورت میں کیا کیا جائے؟

ڈاکٹر ارمیلا جاوید نے کہا کہ جھریاں پڑنے کی صورت میں چند بنیادی امور پر عمل ضروری ہے۔

1: ان کاسمیٹکس کا استعمال کریں جس میں وٹامن سی کی زیادہ مقدار پائی جاتی ہو۔
2: اس کے ساتھ ساتھ ایسے موئسچرائزر کا استعمال کریں جن میں سیرامائڈ مقدار زیادہ ہو۔

انہوں نے کہا کہ اس سب چیزوں کے ساتھ یہ بات سمجھنے کی ضرورت ہے کہ کسی بھی چیز کا استعمال ایک دن میں فائدہ مند ثابت نہیں ہو سکتا، لہذا بہتر نتائج کے لیے ان تمام چیزوں کو عادت بنانے کی ضرورت ہے۔

ڈاکٹر ارمیلا جاوید کا یہ بھی کہنا تھا کہ چہرے کے معاملے میں گھریلو ٹوٹکے استعمال کرنے سے گریز کریں، کوئی بھی چیز ہاتھ یا بازو پر ٹیسٹ کیے بغیر چہرے کی جلد پر استعمال نہ کریں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز