جمال خاشقجی قتل کیس: پانچ افراد کو سزائے موت

جمال خاشقجی سمجھتے تھے کہ انھیں گرفتار نہیں کیا جائے گا|humnews.pk

ریاض: سعودی عدالت نے صحافی جمال خاشقجی قتل کیس میں پانچ افراد کو سزائے موت جبکہ تین مجرموں کو 24 سال قید کی سزا سنائی ہے۔

خبر رساں ایجنسی کے مطابق سعودی صحافی کے قتل میں عدالت نے 11 ملزمان کو ذمہ دار قرار دے دیا ہے۔

جمال خاشقجی کو 2 اکتوبر 2018 میں استنبول میں سعودی قونصل خانے میں قتل کیا گیا تھا۔

یہ بھی پڑھیںؒ سعودی صحافی جمال خاشقجی کے قتل سے متعلق نئی تفصیلات سامنے آگئیں

23 اکتوبر 2018 کو سعودی صحافی جمال خاشقجی کو استنبول میں قتل کیا گیا تھا اور ان کی  لاش کے ٹکڑے مبینہ طور پر سعودی قونصل جنرل کے گھر سے برآمد ہوئے تھے۔

ذرائع ابلاغ کے مطابق صحافی کی لاش کے ٹکڑے سعودی قونصل جنرل کے گھر کے باغ میں دفن کیے گئے تھے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق جمال خاشقجی کا جسم کئی ٹکڑوں میں تقسیم کیا گیا تھا اور ان کا چہرہ مسخ کر دیا گیا تھا۔

واضح رہے سعودی صحافی خا شقجی دو اکتوبر 2018 کو استنبول میں سعودی قونصل خانہ میں داخل ہونے کے بعد لاپتہ ہوگئے تھے۔ ان کی گمشدگی کے کچھ دن بعد ترکی کا موقف سامنے آیا تھا کہ خاشقجی کو قتل کیا جاچکا ہے۔

خاشقجی کی گمشدگی کے بعد مغرب کی طرف سے سعودی عرب پر دباؤ بہت بڑھ گیا تھا کہ وہ اس گمشدگی کے بارے میں قابل اعتبار وضاحت فراہم  کریں جبکہ متعدد مغربی ممالک نے سعودی عرب میں ہونے والی سرمایہ کاری کانفرنس کے بھی بائیکاٹ کا اعلان کیا تھا۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز