بچی کے اغوا کے مقدمے میں سینیٹر سرفراز بگٹی کی گرفتاری کا حکم

سینیٹر سرفراز بگٹی بچی کے اغوا کیس میں گرفتار

فائل فوٹو

کوئٹہ: بلوچستان ہائی کورٹ نےسینیٹر سرفراز بگٹی کو9 سالہ بچی کے اغوا کے کیس میں گرفتار کرنے کا حکم دیا ہے۔

ہائی کورٹ کے اسپیشل جج کی عدالت نے آج ان کی ضمانت منسوخ کرتے ہوئے گرفتاری کا حکم دیا تھا۔

ایک 9سالہ بچی ماریہ کی نانی نے سرفراز بگٹی کو اغوا کے مقدمے میں نامزد کیا تھا۔ کوئٹہ بجلی روڈ پولیس اسٹیشن میں دائر ایف آئی آر کے مطابق نانی اپنی پوتی کو اس کے باپ توکل علی سے ملوانے عدالت لے گئی تھی۔

ایف آئی آر کے متن میں درج کے کہ سحرش نامی خاتون کے قتل کے بعد عدالت نے اس کی بیٹی کو نانی کے حوالے کیا تھا۔ ایف آئی آر میں الزام لگایا گیا ہے کہ عدالت میں پیشی کے موقع پر بچی کا والد لڑکی کو زبردستی گاڑی ڈال کر سینیٹر سرفراز بگٹی کے گھر لے گیا تھا۔

خاتون نے سینیٹر سرفراز بگٹی سے رابطہ کیا تو انہوں نے واقعہ میں ملوث ہونے سے انکار کردیا تھا۔ بچی کے اغوا کے مقدمے میں اس کے والد کو بھی نامزد کیا گیا ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز