’اپوزیشن جماعتیں حکومت کا حصہ لگ رہی ہیں‘

آزادی مارچ کے آفٹر شاکس آنا شروع ہوچکے ہیں، جے یو آئی (ف) سربراہ

’جے یو آئی (ف) میں اسلام آباد کا رخ کرنے کی ہمت نہیں‘

راولپنڈی: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے حزب اختلاف کی جماعتوں کے حالیہ کردار پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آج ان کی جماعت کا اجلاس ہونے جارہا ہے جس کے دوران پنجاب میں احتجاجی تحریک دوبارہ شروع کرنے پر غور ہوگا۔

راولپنڈی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ اپوزیشن کی بڑی جماعتوں نے بھی عوام کو مایوس کیا۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اپوزیشن کی جماعتیں حکومت کا حصہ لگ رہی ہیں، ان کا آپسی انتشار حکومت کے استحکام کا سبب بن رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ آرمی چیف کی توسیع کے معاملے پر حزب اختلاف کا حکومت کا ساتھ دینے سے نقصان ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جمعیت علمائے اسلام سیاسی محاذ پر سینئر جماعت ہے اور سیاست کا طویل ترین تجربہ ہمیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ ناجائز اور نااہل حکومت ملک پر مسلط ہے جبکہ عام آدمی مہنگائی کے ہاتھوں کرب کا شکار ہے جس نے لوگوں کو خودکشی اور بچے بیچنے پر مجبور کردیا، ہمارے مالیاتی ادارے بھی بیٹھ گئے ہیں۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ بین الاقوامی دباؤ پر دینی مدارس کے لیے جال بچھائے جارہے ہیں اور تاثر دیا جارہا ہے کہ دہشتگردی اور انتہا پسندی کا سبب مدارس ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے جمہوریت کے لیے قربانیاں دی ہیں اور مدارس کی خود مختاری پر سمجھوتہ نہیں کریں گے، اصلاحات کے لفظ کو بھی توہین سمجھتے ہیں۔

’آزادی مارچ کے آفٹر شاکس آنا شروع ہوچکے ہیں‘

ان کا کہنا تھا کہ تبدیلیوں کا عمل شروع ہوچکا ہے، آزادی مارچ کے آفٹر شاکس آنا شروع ہوچکے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جس طرح امریکہ میں ٹرمپ کی حکومت اسی بھارت میں مودی کی حکومت ہے اور جس طرح بھارت میں مودی  کی حکومت اسی پاکستان میں عمران خان کی حکومت ہے۔

جے یو آئی سربراہ نے واضح کیا کہ رہبر کمیٹی تحلیل نہیں ہوئی، اس موجود سیاسی ماحول سے ہیجان اور ناراضگیاں پیدا ہوئیں ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ عوامی طاقت کے ذریعے اس حکومت سے نجات حاصل کریں گے، ہم واحد لوگ ہیں جو اپنے نظریہ کی کوک سےجنم لیتے ہیں۔

 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز