سرکاری ملازمین پر اسمارٹ فون دفاتر میں لانے پر پابندی

سرکاری ملازمین پر اسمارٹ فون دفاتر میں لانے پر پابندی

فائل فوٹو

اسلام آباد: اسٹیبلشمنٹ ڈویژن نے گریڈ1 سے 16 تک کے ملازمین پراسمارٹ فون دفاتر میں لانے پر پابندی لگادی ہے۔

سرکاری افسروں کے ماتحت کام کرنے والے ملازمین اسمارٹ فون استعمال نہیں کر سکیں گے۔ اسٹیبلشمنٹ ڈویژن سے جاری مراسلے کے مطابق پابندی سیکیورٹی کومدنظررکھتے ہوئے لگائی گئی ہے۔

اسٹیبلشمنٹ ڈویژن کے مراسلے میں کابینہ ڈویژن کےخط کا بھی حوالہ دیا گیا ہے۔ مراسلے کے مطابق وزارتوں اور ماتحت اداروں میں بھی ایسا سرکلر جاری کیا گیا ہے۔

مزیدجانیں: سرکاری افسران کے واٹس ایپ استعمال پر پابندی کی تجویز

اس سے قبل وفاقی حکومت نے سرکاری افسران اور ان کے ماتحت اہلکاروں کو ذرائع ابلاغ سے رابطہ کرنے سے منع کر دیا تھا۔ وفاقی حکومت نے اپنے افسران و اہلکاروں کو پابند کر رکھا ہے کہ وہ کسی بھی قسم کی معلومات یا دستاویزات ذرائع ابلاغ کو فراہم نہیں کریں گے۔

چند روز قبل پنجاب حکومت نے بھی غیر متعلقہ افراد پر خفیہ معلومات افشاں ہونے کے خدشات کے پیش نظر دفاتر میں واٹس ایپ کے ذریعے سرکاری دستاویزات کی شیئرنگ پر پابندی عائد کی تھی۔

یہ بھی پڑھیں: پنجاب حکومت نے سرکاری دفاتر میں واٹس ایپ کے استعمال پر پابندی عائد کر دی

ذرائع کے مطابق صوبائی حکام کو اس ضمن میں شکایات موصول ہوئی تھیں کہ سرکاری محکمے اپنے دفتری معاملات چلانے کے لئے واٹس ایپ کا استعمال کررہے ہیں اور میسجنگ سروس پر دستاویزات کا تبادلہ کیا جارہا ہے۔

بتایا گیا ہے کہ دستاویزات شیئرنگ کے لیے واٹس گروپس تشکیل دیئے گئے تھے جہاں سے دستاویزات لیک ہوئے ہیں۔

اعلی افسران نے اس سنگین معاملے کا نوٹس لیتے ہوئے تمام محکموں کو ہدایت کی ہے کہ وہ حکومت کو ممکنہ خطرات کے پیش نظر کراس پلیٹ فارم میسجنگ سروس پرسرکاری دستاویزات اور معلومات کا تبادلہ کرنے سے اجتناب کریں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز