’جلد حکومت ختم کرنے کا وعدہ کرنے والوں کا نام بتاؤں گا‘

میرا جسم میری مرضی فحاشی ہے، سربراہ جے یو آئی ف

ملتان: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ بہت جلد جنوری میں حکومت ختم کرنے کا وعدہ کرنے والوں کا نام بتاؤں گا۔

ملتان میں میڈیا سے گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ ق لیگ کو یقین دہانی کا کوئی اختیار نہیں، پیچھے کوئی اور تھا اور سامنے ق لیگ تھی۔

سربراہ جے یو آئی (ف) نے کہا کہ موجودہ حکومت کو مزید وقت ملا تو ملک میں انقلاب آجائے گا۔

مزید پڑھیں: مولانا فضل الرحمان کا حکومت کے خاتمے کیلئے تحریک چلانے کا اعلان

انہوں نے کہا کہ ملکی سیاست کو پرامن رکھنا چاہتے ہیں اور ہم نے پر امن مارچ کیا، ہم سے معاہدہ کرنے والے پاسداری کریں۔

انہوں نے خبردار کیا کہ ہم سے کیے گئے وعدے پورے نہ ہوئے تو نام سامنے پائیں گے، مجھ پر آرٹیکل 6 لگانا مذاق ہے۔

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ ملک میں بڑا کاروباری طبقہ پیسہ باہر لے جارہا ہے، کارخانے بند ہونے سے معیشت ڈوب جائےگی، معاشی طور پر کمزوری ریاست کے لئے نقصان دہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ بڑی جماعتوں کا کردار بھی بڑا ہونا چاہیئے، ملک ڈوب رہا ہے اور سیاسی جماعتیں اگلی حکومت پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: مولانا فضل الرحمان نے پھرسڑکوں پر آنے کا اشارہ دے دیا

ان کا کہنا تھا کہ حج فارم میں ختم نبوت حلف نامے میں غلطی سنگین ہے اور اس حوالے سے وزیر اطلاعات کی لاعلمی حیران کن ہے۔

انہوں نے الزام عائد کیا کہ ختم نبوت کے بارے میں قوانین سے جان بوجھ کر چھیڑ چھاڑ کی جارہی ہے۔

عورت مارچ کے معاملے پر ردعمل دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ’میرا جسم میری مرضی‘ فحاشی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ آئین، قانون اور تہذیب اس کی اجازت نہیں دیتی، یہ نعرہ صرف ایک فیصد طبقے کا ہے۔

مزید جانیں: حکومت دسمبر تک کی مہمان ہے، مولانا فضل الرحمان کا دعویٰ

انہوں نے الزام عائد کیا کہ عورت مارچ باہر کا ایجنڈا ہے، یہ کون سا حق مانگ رہے ہیں؟

مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ وراثت، جائیداد اور معاش میں اسلام نے عورت کو حصہ دیا ہے تاہم کچھ لوگ ملک کو زمانہ جہالت کی طرف لے جارہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ افغانستان میں برسراقتدار قوتیں اور کئی ممالک معاہدے سے خوش نہیں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز