مفخر عدیل نے شہباز تتلہ کے قتل کا اعتراف کر لیا، 5 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

مفخر عدیل نے شہباز تتلہ کے قتل کا اعتراف کر لیا، 5 روزہ جسمانی ریمانڈ منظور

لاہور: جوڈیشل مجسٹریٹ نے شہباز تتلہ کیس میں گرفتار ایس ایس پی مفخر عدیل کو پانچ روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے کردیا ہے۔

ملزم کو جوڈیشل مجسٹریٹ شازیہ محبوب کی عدالت میں روبرو پیش کیا گیا۔ عدالت میں پیش کی گئی پولیس رپورٹ کے مطابق مفخرعدیل نے شہباز تتلہ کے قتل کا اعتراف کرلیا۔

سابق اسٹنٹ اٹارنی جنرل شہباز تتلہ قتل کیس میں گرفتار ملزم ایس ایس پی مفخرعدیل بکتر بند گاڑی میں لے آکر۔ تفتیشی افسر نے مفخر عدیل کے چودہ روز کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا کی۔

شہباز تتلہ کیس: ایس ایس پی مفخر عدیل نے گرفتاری دے دی، ذرائع

تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایا کہ ملزم مفخرعدیل نے شہباز تتلہ کو قتل کرنے کا اعتراف کرلیا ہے۔ ملزم نے اعتراف کیا کہ اس نے قتل کے بعد لاش کوتلف کردیا۔

عدالت سے استدعا کی گئی کہ ملزم سے آلہ قتل اور لاش برآمد کرنے کے لیے جسمانی ریمانڈ دیا جائے۔
شہباز تتلہ کے وکیل فرہاد علی شاہ نے پولیس کی تفتیش پر اطیمنان کا اظہار کیا اور کہا کہ اس کیس میں مزید حقائق سامنے آئیں گے ۔

عدالت نے فریقین وکلا کے دلائل سننے کے بعد ملزم ایس ایس پی مفخرعدیل کو پانچ روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کی تحویل میں دے دیا۔

خیال رہے کہ پنجاب پولیس کے لاپتہ ایس ایس پی مفخرعدیل کو گزشتہ روز گلگت سے حراست میں لے کر لاہور منتقل کیا گیا تھا۔

ایس ایس پی مفخر عدیل 12 فروری 2020 سے لاپتہ تھے۔ وہ پنجاب پولیس کو شہباز تتلہ کے اغوا اور مبینہ قتل میں پولیس کو مطلوب تھے۔

شہباز تتلہ کے اغوا کا مقدمہ تھانہ نصیرآباد میں سات فروری کو درج کیا گیا ہے۔ ایس ایس پی کا دوست اسد بھٹی اور ملازم عرفان بھی پولیس حراست میں ہیں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز