سعودی عرب: جان بوجھ کر تھوکنے والے شخص کو سزائے موت دی جاسکتی ہے

سعودی عرب میں کورونا کے کیسز 2 لاکھ تک جانے کا خدشہ

ریاض: سعودی عرب کے ایک شاپنک مال میں ٹرالیز پر تھوک پھینکنے والے گرفتار شخص کو جرم ثابت ہونے کی صورت میں سزائے موت دی جاسکتی ہے۔

گلف نیوز کی رپورٹ کے مطابق متعلقہ شخص کو شمالی سعودی عرب میں تھوک پھینکتے دیکھا گیا تھا جس کے بعد انہیں گرفتار کرلیا گیا۔ تاحال یہ غیر واضح ہے کہ ملزم نے ایسا کام کیوں کیا۔

مزید پڑھیں: کورونا وائرس: دنیا میں 24 ہزار سے زائد اموات

سعودی پراسیکیوشن کے ذرائع کا حوالہ دیتے ہوئے رپورٹ میں بتایا گیا کہ یہ حرکت مذہبی اور قانونی طور پر قابل مذمت ہے اور اس کو جان بوجھ وبا پھیلانے کے زمرے میں شمار کیا جارہا ہے۔

ذرائع کا کہنا تھا کہ ملزم کی حرکت سے عوام میں خوف و ہراس پھیلا اور انہیں موت کی سزا کا بھی سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

خیال رہے کہ دنیا بھر میں کورونا وائرس سے اب تک 24 ہزار سے زائد اموات ہوچکی ہیں جبکہ لاکھوں اس کا شکار ہوچکے ہیں۔

سعودی عرب میں اب تک ایک ہزار سے زائد کیسز رپورٹ ہوچکے ہیں جبکہ تین افراد جان کی بازی ہار چکے ہیں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز