پی سی بی نے خواتین کرکٹرز کیلئے سنٹرل کنٹریکٹ کا اعلان کر دیا

ویمن ٹی 20 ورلڈ کپ: پاکستان کا فاتحانہ آغاز، ویسٹ انڈیز شکست سے دوچار

لاہور: پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے  سیزن 2020-21 کے لیے خواتین کرکٹرز کے سینٹرل کنٹریکٹ کا اعلان کردیا ہے۔

ترجمان پی سی بی کے مطابق یکم جولائی سے نافذ العمل سینٹرل کنٹریکٹ میں اسپنر انعم امین اوربیٹر عمیمہ سہیل سمیت 9 خواتین کرکٹرز کو شامل کیا گیا ہے

دوسری جانب گذشتہ سیزن کے دوران انٹرنیشنل کرکٹ میں شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کے سبب بسمہ معروف، جویریہ خان اور ڈیانا بیگ کو سنٹرل کنٹریکٹ میں ترقی دے دی گئی ہے۔

اس ضمن میں پی سی بی نے سنٹرل کنٹریکٹ میں شامل تمام کٹیگریزکے معاوضوں میں اضافہ کردیا ہے۔ کٹیگری اے کی ماہانہ آمدن میں 33 فیصد ، بی میں 30 جبکہ سی میں 25 فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔

اس کے علاوہ پی سی بی نے عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی نوجوان کرکٹرز کی کارکردگی کو سراہنے اور انہیں کھیل کی طرف مزید راغب کرنے کے لیے ایک نئی کٹیگری تشکیل دی ہے۔

ایمرجنگ کٹیگری کی فہرست میں 16 سالہ سیدہ عروب شاہ، 15 سالہ عائشہ نسیم اور 22 سالہ منیبہ علی ، فاطمہ ثناء، کائنات حفیظ، نجیہ علوی، رامین شمیم، صباء نذیراور سعدیہ اقبال شامل ہیں۔

اُدھر پی سی بی نے ڈومیسٹک ایونٹس کے معاوضے بھی بڑھا دئیے ہیں۔ ان ایونٹس کی میچ فیس اور انعامی رقم میں 100 فیصد جبکہ ڈومیسٹک ڈیلی الاؤنس میں 50 فیصد اضافہ کیا گیا ہے۔

علاوہ ازیں پی سی بی نے بسمہ معروف کو سیزن 2020-21 کے لیے کپتان برقرار رکھنے کا اعلان کیا ہے تاہم فیصلہ کیا گیا ہے کہ ہیڈ کوچ اقبال امام کے کنٹریکٹ میں توسیع نہیں کی جائے گی۔

اقبال امام کی خدمات کو واپس ہائی پرفارمنس سیٹ اپ کے حوالے کردیاگیا ہے۔ہیڈ کوچ کی تقرری کے لیے اشتہار مقررہ وقت پر جاری کردیا جائے گا۔

کٹیگری اے میں  بسمہ معروف، جویریہ خان، کٹیگری بی عالیہ ریاض، ڈیانا بیگ اور سدرہ نواز اور کٹیگری سی میں انعم امین، ناہیدہ خان، عمیمہ سہیل اور ندا ڈار شامل ہیں۔

پی سی بی نے قومی کھلاڑیوں کے سنٹرل کنٹریکٹس کا اعلان کردیا

ایمرجنگ کنٹریکٹ لسٹ میں سیدہ عروب شاہ، عائشہ نسیم، منیبہ علی ، فاطمہ ثناء، کائنات حفیظ، نجیہ علوی، رامین شمیم، صباء نذیراور سعدیہ اقبال شامل ہیں۔

آئندہ 12 ماہ میں قومی خواتین کرکٹ ٹیم کو آئی سی سی ویمنز کرکٹ ورلڈکپ کوالیفائر اور اے سی سی ویمنز ٹی ٹونٹی کپ میں شرکت کرنی ہے۔ اس دوران قومی انڈر 19 خواتین کرکٹ ٹیم کو آئی سی سی انڈر 19 ویمنز ٹی ٹونٹی ورلڈکپ میں شرکت کرنی ہے۔

’ توقعات کے مطابق کارکردگی کا مظاہرہ نہ کرنے کے سبب ندا ڈار کی کٹیگری میں تنزلی کی گئی ‘

چیف سلیکٹر قومی خواتین کرکٹ عروج ممتاز کا کہنا ہےکہ سلیکشن کمیٹی کی جانب سے وہ سنٹرل کنٹریکٹ حاصل کرنے والی کھلاڑیوں کو مبارکباد پیش کرتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سنٹرل کنٹریکٹ کے اعلان سے قبل سلیکشن کمیٹی نے ایک طویل مشاورت کی، جہاں گذشتہ 12 ماہ کے دوران قومی خواتین کھلاڑیوں کی کارکردگی اور فٹنس کا پیمانہ اپنایا گیا ۔

عروج ممتاز کا کہنا ہے کہ رواں سال بیٹنگ کے شعبے میں پاکستان کے لیے نمایاں کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی بسمہ معروف اور جویریہ خان کو سنٹرل کنٹریکٹ کی اے کٹیگری میں شامل کیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بسمہ معروف نے رواں سال ایک روزہ کرکٹ میں 42.60 کی اوسط سے 213 اور ٹی ٹونٹی کرکٹ میں 39.33کی اوسط سے 236 رنز بنائے۔ دونوں کرکٹرز اس سے قبل بی کٹیگری کا حصہ تھیں۔

عروج ممتاز نے کہا کہ گذشتہ 12 ماہ میں پاکستان کے باؤلنگ اٹیک کی قیادت کرنے والی فاسٹ باؤلر ڈیانا بیگ کو بھی عمدہ کارکردگی کی بدولت سنٹرل کنٹریکٹ میں ایک درجہ ترقی دے کر بی کٹیگری میں شامل کیا گیا ہے۔

ان کے علاوہ آلراؤنڈر عالیہ ریاض اور وکٹ کیپر سدرہ نواز بھی کٹیگری بی کا حصہ ہیں۔

عروج ممتاز نے عمیمہ سہیل اور انعم امین کی سنٹرل کنٹریکٹ میں شمولیت پر خوشی کا اظہا رکرتے ہوئے کہا کہ عمیمہ سہیل کی کارکردگی میں تسلسل اور انعم امین کی ٹی ٹونٹی کرکٹ میں بہترین باؤلنگ نے انہیں کنٹریکٹ دلانے میں اہم کردارادا کیا ہے۔

چیئر آف قومی خواتین کرکٹ کا کہنا ہے کہ انٹرنیشنل کرکٹ میں توقعات کے مطابق کارکردگی کا مظاہرہ نہ کرنے کے سبب ندا ڈار کی کٹیگری میں تنزلی کی گئی ہےتاہم وہ ایک اہم رکن ہیں ، انہیں اعتماد ہے کہ وہ جلد بہترین کارکردگی پیش کرنےکی صلاحیت رکھتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ 6 ماہ بعد سنٹرل کنٹریکٹ میں شامل قومی خواتین کھلاڑیوں کی مجموعی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا۔

عروج ممتاز نے کہاکہ وہ سیزن 2020-21 کے لیے کپتان مقرر ہونے پر بسمہ معروف کو مبارکباد پیش کرتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بسمہ معروف نے ٹی ٹونٹی اور ایک روزہ کرکٹ میں شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا ہے اور ان کی ڈریسنگ روم ، گراؤنڈ اور اسکواڈ کی قیادت سے کھلاڑیوں کو بہت فائدہ ہورہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ نئی تشکیل کردہ ایمرجنگ کٹیگری کے اعلان پر مسرور ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس کٹیگری میں شامل 9 خواتین کرکٹرز مستقبل کا اثاثہ ہیں اور انہیں امید ہے کہ اس اعلان سے نوجوان کھلاڑیوں کی حوصلہ افزائی ہوگی۔

متعلقہ خبریں