سینیٹ کمیٹی نے فلم “زندگی تماشا” ریلیز کرنے کی اجازت دے دی

سینیٹ کمیٹی نے فلم “زندگی تماشا” ریلیز کرنے کی اجازت دے دی

اسلام آباد: سینیٹ کی انسانی حقوق کمیٹی نے فلم “زندگی تماشا” پر تمام اعتراضات ختم کرتے ہوئے فلم ریلیز کرنے کی اجازت دے دی۔

سینیٹ کی فنکشل کمیٹی انسانی حقوق کا اجلاس سینیٹر مصطفی نواز کھوکھر کی زیر صدارت ہوا۔ چئیرمین کمیٹی مصطفی نواز کھوکھر نے کہا کہ فلم میں کوئی بھی قابل اعتراض مواد موجود نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ کمیٹی کے تمام ممبران نے متفقہ طور پر فلم کو ریلیز کرنے کی سفارش کی ہے، اس لیے فلم کو روکنے کا کوئی جواز نہیں بنتا۔

مصطفیٰ نواز کھوکھر نے کہا کہ کرونا کی صورتحال ختم ہوتے ہی فلم ریلیز کر دی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں ماڈل نادیہ حسین کے ساتھ آن لائن فراڈ ہوگیا

دوسری جانب کمیٹی نے کم عمر بچوں کو ملازمت پر رکھنے کو بھی غیر قانونی قرار دے دیا۔ کمیٹی نے وزارت داخلہ کو بچوں سے گھریلو ملازمت کو غیر قانونی قرار دینے کی سفارش کردی۔

کمیٹی نے کہا کہ وزارت داخلہ ڈومیسٹک چائلڈ لیبر ایکٹ میں ملازمت کو غیر قانونی قرار دینے کی شق شامل کرے اور شق سے متعلق بائیس جولائی کو رپورٹ پیش کی جائے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز