سلامتی کونسل کی جانب سے مسئلہ کشمیر کو اٹھانے کا خیر مقدم کرتا ہوں، وزیراعظم

حالات کا جائزہ لینے کے لیے خود کراچی جاؤں گا، وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی جانب سے مسئلہ کشمیر کو اٹھانے کا خیر مقدم کرتا ہوں۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے ایک پیغام میں وزیراعظم نے کہا کہ مسئلہ کشمیر 70 سالوں سے سلامتی کونسل کے ایجنڈے پر ہے۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ اقوام متحدہ کے چارٹر کے مطابق عالمی امن برقرار رکھناسلامتی کونسل کی ذمہ داری ہے۔ اقوام متحدہ کی قراردادوں پر عملدرآمد بھی سلامتی کونسل کی ذمہ داری ہے۔

اس سے قبل پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں پیش کی گئیں قراردوں میں کہا گیا کہ بھارت مقبوضہ کشمیرمیں ماورائےعدالت قتل بند کرے، عالمی مبصرین کو رسائی دے، انسانی حقوق کی جاری خلاف ورزیاں روکی جائیں اور گرفتار کشمیری نوجوانوں کو فوری طور پر رہا کیا جائے۔

مزید پڑھیں: کشمیر: اقوام متحدہ ہمارا نقشہ قبول کرلے مسئلہ حل ہو جائیگا،صدر

ہم نیوز کے مطابق یہ مطالبات اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر کی زیر صدارت پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کی جانب سے کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لیے قرار دادیں پیش کی گئیں جنہیں متفقہ طورپر منظور کیا گیا۔

مخدوم شاہ محمود قریشی کی جانب سے پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں پیش کی جانے والی قرار دادوں میں کہا گیا ہے کہ بھارت ایل او سی پر شہری آبادی کو مسلسل نشانہ بنا رہا ہے۔

قراردادوں میں کشمیریوں پر مظالم کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ بھارتی اقدامات جنوبی ایشیا کے امن و استحکام کے لیے بڑا خطرہ بن چکے ہیں۔

ہم نیوز کے مطابق پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس میں متفقہ طور پر منظور کی جانے والی قراردادوں میں کہا گیا ہے کہ بی جے پی حکومت ہندو توا نظریے پرکاربند ہے۔

قرارداد میں کہا گیا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر عالمی سطح پر تسلیم شدہ متنازع علاقہ ہے اور بھارت یکطرفہ طور پرمقبوضہ کشمیر کی قانونی حیثیت تبدیل نہیں کر سکتا ہے

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز