ایل او سی کی خلاف ورزی، پاکستان کا بھارت سے شدید احتجاج

 اسلام آباد: پاکستان نے بھارت کی جانب سے ایل او سی کی مسلسل خلاف ورزی پر شدید احتجاج کیا۔

دفتر خارجہ نے بھارتی ہائی کمیشن کے سینئر سفارتکار کو دفتر خارجہ طلب کر کے لائن آف کنٹرول (ایل او سی) کی مسلسل خلاف ورزی پر شدید احتجاج کیا۔

ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ کے مطابق بھارت نے 13 ستمبر کو ایل او سی پر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی کی اور بھارتی فورسز کی بلااشتعال فائرنگ سے 3 شہری شدید زخمی ہوئے۔ بھارتی قابض فوج نے ایل او سی اور ورکنگ باونڈری پر سول آبادی کو نشانہ بنایا۔

رواں برس بھارت نے 2 ہزار 245 بار سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی کی اور بھارتی اشتعال انگیزیوں سے رواں سال اب تک 18 شہری شہید اور 180 شہری زخمی ہو چکے ہیں۔

ترجمان نے کہا کہ بھارت کی جانب سے شہریوں کو جان بوجھ کر نشانہ بنانا قابل مذمت ہے اور بھارت کی یہ اشتعال انگیزی 2003 سیز فائر معاہدے کی خلاف ورزی ہے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کی اشتعال انگزیزی خطے میں امن و سلامتی کے لیے خطرہ بن چکی ہے اور بھارت اپنی حرکتوں سے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے دنیا کی توجہ نہیں ہٹا سکتا۔

یہ بھی پڑھیں: پاک فوج نے ایل او سی پر بھارت کا ایک اور جاسوس ڈرون مار گرایا

زاہد حفیظ نے کہا کہ بھارت اقوام متحدہ سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عمل درآمد اور بھارت 2003 سیز فائر معاہدے کی پاسداری کو یقینی بنائے۔ شہریوں کو نشانہ بنانا عالمی قوانین اور اقدار کے منافی ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز