وزیراعظم سے پی سی بی عہدیداروں اور کھلاڑیوں کی ملاقات کی اندرونی کہانی

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان سے پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) عہدیداروں اور کھلاڑیوں کی ملاقات کی اندرونی کہانی سامنے آ گئی۔

ذرائع کے مطابق ملاقات میں کرکٹرز محمد حفیظ، اظہر علی اور چیف سیلکٹر مصباح الحق  نئے ڈومسٹک اسٹریکچر میں ڈیپارٹمنٹ کو شامل کرنے پر زور دیتے رہے۔

کھلاڑیوں نے مؤقف اپنایا کہ ڈیپارٹمنٹ کرکٹ ختم ہوجانے سے متعدد کرکٹرز بے روزگار ہوئے ہیں۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے کھلاڑیوں کی تجویز مسترد کر دی ہے۔

پی سی بی کا ڈومیسٹک سیزن 21-2020 کے شیڈول کا اعلان

اس سے قبل وزیر اعظم عمران خان نے ڈومیسٹک کرکٹ کے نشریاتی حقوق سے متعلق تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ  جتنا ٹیلنٹ پاکستان میں ہے دنیا میں کہیں نہیں اور میرا خواب ہے آئندہ ورلڈ کپ میں پاکستان کا ٹیلنٹ نظر آئے۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ  اگر ہم نے کرکٹ کا ڈھانچہ تبدیل کیا تو کوئی ہمیں شکست نہیں دے سکتا۔

انہوں نے کہا کہ ڈومیسٹک کرکٹ کے نشریاتی حقوق کے معاہدے پر دستخط اہم پیش رفت ہے اور نشریاتی حقوق کے معاہدے سے کرکٹ کو فروغ ملے گا۔ چیئرمین کرکٹ بورڈ نے کرکٹ نشریاتی حقوق کے معاہدے کے لیے کام کیا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ماضی میں کرکٹ میں من پسند افراد کو جگہ دی گئی  اور اداروں میں سفارش پر لوگوں کو بھرتی کرنا نظام کو کمزور کردیتا ہے تاہم کھلاڑیوں کو بہتر بنانے کے لیے مضبوط نظام کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں ٹیلنٹ کو نکھارنےکرنے کی ضرورت ہے، آسٹریلیا کی ٹیم میں میرٹ ہے اس لیے وہ دنیا پر راج کر رہے ہیں لیکن پاکستان میں سسٹم نہ ہونے کی وجہ سے ٹیلنٹ اوپر نہیں آرہا تھا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ایک وقت تھا جب سرکاری ٹی وی سب دیکھتے تھے اب ہمیں بہتر معیار پر آنا ہو گا۔

تقریب میں ڈومیسٹک کرکٹ کے نشریاتی حقوق کے 3 سالہ معاہدے پر دستخط کیے گئے اور اس معاہدے سے پی سی بی کو 200 ملین امریکی ڈالر کی آمدن متوقع ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے مطابق نشریاتی حقوق معاہدے کی پہلی اسائمنٹ نیشنل ٹی ٹوئنٹی کپ ہو گی جبکہ معاہدے سے کرکٹ پر مثبت اثرات مرتب ہوں گے۔ قومی مینز اور ویمنز کرکٹ کے فروغ پر 15 بلین روپے خرچ کریں گے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز