ہمیں بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے احتجاج کرنے دیا جائے، رمیش کمار

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی اور پاکستان ہندو کونسل کے سربراہ رمیش کمار نے مطالبہ کیا ہے کہ جودھ پور میں 11 پاکستانی ہندوؤں کی پراسرار موت پر احتجاج کرنے والوں کو بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے احتجاج کرنے دیا جائے۔

اسلام آباد میں  پاکستانی ہندوؤں کے قتل کیخلاف ہندو برادری کے احتجاج کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رمیش کمار نے کہا کہ بھارتی ہائی کمیشن جودھ پور میں 11 پاکستانی ہندوؤں کی پراسرار موت کے واقعہ کی ایف آئی آر کی کاپی فراہم کرے۔  بھارتی ہائی کمیشن کی جانب سے مقدمے کی کاپی فراہم نہ کرنے تک ہم یہاں سے نہیں ہٹیں گے۔

رہنما ہندو کونسل رمیش کمار نے کہا کہ ہم اس معاملے کو ہر سطح پر اٹھائیں گے۔ ہم 11 پاکستانی ہندوؤں کے خون کا حساب لینے آئے ہیں۔ ہم ڈپلومیٹک انکلیو کے اندر بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے دھرنا دینا چاہتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تمام مظاہرین اندر نہیں جائیں گے صرف چند لوگ جائیں گے۔ میں چند لوگوں کےساتھ ڈپلومیٹک انکلیو کے اندر داخل ہوں گا۔ مظاہرین چاہتے ہیں کہ بھارتی ہائی کمیشن کو اس معاملے کا پتا چلے۔ انتظامیہ سے درخواست ہے ہمیں بھارتی ہائی کمیشن کے سامنے جانے دیا جائے۔

رمیش کمار نے کہا کہ اگر پاکستانی ہندو گھرانے نے اجتماعی خودکشی کی تو پوسٹ مارٹم رپورٹ کیوں چھپائی گئی۔ ہمارا مطالبہ بھارت سے ہے پاکستان سے نہیں۔ ہم چاہتے ہیں کہ پر امن احتجاج کرکے واپس جائیں۔

رمیش کمار نے کہا کہ بھارت سے حساب لینے کا وقت آگیا ہے۔ ہمیں سمجھوتہ ایکسپریس کا بھی حساب لینا ہوگا۔ بھارت لوگوں کوشہریت کے بجائے جاسوسی کیلئے استعمال کرتا ہے۔ بھارت میں جاسوسی کیلئے رضامند نہ ہونے والوں کو قتل کردیاجاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہندو کمیونٹی اپنے وطن کے ساتھ محبت کرتی ہے اور قربانیوں کیلئے تیار ہے۔ مودی اور  بھارتی جنتا پارٹی کی حکومت نے متعصبانہ پالیسیاں اپنا رکھی ہیں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز