اپوزیشن جماعتوں کا پہلا جلسہ7 اکتوبر کو رکھنے پر غور

حکومت کیخلاف جلسوں، ریلیوں اور مظاہروں کا پلان تیار

فائل فوٹو

اسلام آباد: قومی اسمبلی میں حزب اختلاف کی سیاسی جماعتیں7اکتوبر کو پہلا جلسہ کوئٹہ میں رکھنے پرغور کر رہی ہیں۔ 

ہم نیوز کے ذرائع کے مطابق محمود خان اچکزئی نے7 اکتوبر کو کوئٹہ میں جلسہ کرنے کی تجویز دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ تیاری کیلئے وقت چاہئے تو ایک دو دن کی تاخیر کی جا سکتی ہے۔ جلسے کی حتمی تاریخ اور مقام کا اعلان تمام جماعتوں کو اعتماد میں لےکرکیا جائے گا۔

خیال رہے کہ اپوزیشن نے20ستمبر2020 کو ہونے والی آل پارٹیز کانفرنس میں فیصلہ کیا تھا کہ اکتوبر اور نومبر میں صوبائی دارالحکومتوں سمیت بڑے شہروں میں جلسے کیے جائیں گے جب کہ دسمبر میں ملک گیر ریلیاں اور مظاہرے ہوں گے۔

یہ بھی پڑھیں:اے پی سی، اپوزیشن کا وزیراعظم عمران خان کے فوری استعفے کا مطالبہ

حزب اختلاف نے اپنے پلان میں پارلیمان کے اندر اور باہر تمام سیاسی اور آئینی آپشنز استعمال کرنے کے علاوہ عدم اعتماد کی تحاریک اور اسمبلیوں سے اجتماعی استعفوں کا آپشن بھی رکھا ہے۔

اے پی سی میں پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے نام سے اپوزیشن کا اتحاد تشکیل دیا گیا ہے۔ اے پی سی نے مطالبہ کیا کہ شفاف اورآزادانہ انتخابات کرائے جائیں کیونکہ موجودہ حکومت کو دھاندلی کے ذریعےمسلط کیا گیا ہے۔

آل پارٹیز کانفرنس میں صدارتی نظام کے ارادے کو رد کرتے ہوئے کہا گیا کہ صوبائی خود مختاری پر کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا۔

حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ چینی اور پیٹرولیم کی قیمتوں میں کمی لائیں۔ اے پی سی نے شہری اور میڈیا کی آزادی پر بھی سمجھوتہ نہ کرنے کا عزم کیا ہے۔ اے پی سی کا یہ بھی مطالبہ ہےکہ اجلاس سیاسی انتقام پر گرفتار سیاسی رہنما اور کارکنوں کو فوری رہا کیا جائے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز