ایل او سی پر سیزفائر کی خلاف ورزی: بھارتی سفارتکار کی دفتر خارجہ طلبی

اسلام آباد: لائن آف کنٹرول پر سیز فائر کی خلاف ورزی پر سینئر بھارتی سفارتکار کو دفترخارجہ طلب کر کے احتجاجی مراسلہ تھمایا گیا۔

ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ کے مطابق بھارتی افواج ایل اوسی پر شہری آبادی کو نشانہ بنارہی ہیں۔ بھارتی اہلکار سے ایل او سی پر جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی پر احتجاج کیا گیا۔

ترجمان کے مطابق بھارتی اشتعال انگیزیوں میں 19 شہری شہید اور 192 شدیدزخمی ہوئے ہیں۔ بھارتی فورسز نے 30 ستمبر کو ایل او سی پر بلااشتعال فائرنگ کی۔
قابض بھارتی فورسز کی فائرنگ سے ایک نہتا شہری شدید زخمی ہوا۔

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق رواں برس بھارت نے اب تک فائر بندی انتظام کی 2404 خلاف ورزیاں کیں۔ بھارت کا معصوم شہریوں کو جان بوجھ  کر نشانہ بنانا قابل مذمت ہے۔

ترجمان دفتر خارجہ زاہد حفیظ کے مطابق بھارت کی پے درپے اشتعال انگیزیاں خطے میں امن وسلامتی کے لیے خطرہ ہیں۔ بھارت ان حرکتوں سے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے دنیا کی توجہ نہیں ہٹا سکتا۔ بھارت اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں پرعمل درآمد یقینی بنائے۔

خیال رہے کہ گزشتہ روز بھارتی فوج نے پھر لائن آف کنٹرول کی خلاف ورزی کرتے ہوئے بلا اشتعال فائرنگ کی تھی۔

شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق بھارتی فوج نے جندروٹ سیکٹر پر شدید فائرنگ کی تھی۔ بھارتی فوج کی فائرنگ سے 65 سالہ خاتون زخمی ہو گئی تھی۔زخمی خاتون کو فوری طورپر علاج معالجے کے لیے اسپتال منتقل کیا گیا تھا۔

پاکستان نے اس خلاف ورزی پر گزشتہ روز اسلام آباد میں تعینات بھارتی ہائی کمیشن کے ناظم الامور گورو اہلوالیا کو دفتر خارجہ طلب کر کے شدید احتجاج کیا تھا۔

مزید پڑھیں: ایل او سی: بھارتی فوج کی جارحیت سے 15 سالہ نوجوان اور سپاہی شہید

ترجمان دفترخارجہ زاہد حفیظ چودھری کی جانب سے جاری پریس ریلیز کے مطابق پاکستان نے بھارت سے اشتعال انگیزیوں پر شدید احتجاج کیا اوراحتجاجی مراسلہ ناظم الامور کے حوالے کیا۔

ترجمان کے مطابق بھارتی فورسز نے 28 ستمبر کو ایل او سی کے بروہ سیکٹر پر بلااشتعال فائرنگ کی جس سے چار شہری شدید زخمی ہوئے تھے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز