پمز اسپتال میں کروڑوں روپے مالیت کی ادویات جعلی رسیدوں پر جاری ہونے کا انکشاف

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے سب سے بڑے سرکاری اسپتال پاکستان انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ سائنسز (پمز) میں 89 کروڑ 94 لاکھ روپے مالیت کی ادویات جعلی رسیدوں پر جاری ہونے کا انکشاف  ہوا ہے۔

آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے ادویات کی خریداری میں بےضابطگیوں سے متعلق رپورٹ جاری کر دی ہے۔

دستاویزات کے مطابق 2016-18 تک پمز میں 89 کروڑ 94 لاکھ روپے سے زائد مالیت کی ادویات خریدی اور جاری کی گئیں۔ مریضوں کو ادویات دینے سے متعلق ایک بھی رسید کسی ڈاکٹر نے جاری نہیں کی۔

آڈیٹر جنرل آف پاکستان کی رپورٹ کے مطابق اسپتال کے ریکارڈ میں کچھ جعلی رسیدیں موجود ہیں۔ رسیدوں پر مریضوں کے نام اور نمبر، ڈاکٹر کے دستخط اور مہر موجود ہی نہیں ہیں۔

رپورٹ کے مطابق پمز انتظامیہ نے مبینہ بے ضابطگی سے متعلق جواب دینا بھی گوارہ نہ کیا۔ ذمہ داران کے خلاف انکوائری کی جائے۔

ہم نیوز نے پمز اسپتال انتظامیہ کے موقف کے لیے رابطے کی کوشش کی گئی، تاہم کسی بھی ذمہ دار افسر نے موقف دینے سے انکار کیا

پمز میں 89 کروڑ 94 لاکھ روپے مالیت کی ادویات جعلی رسیدوں پر جاری ہونے کا انکشاف
آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے ادویات کی خریداری میں بےضابطگی رپورٹ جاری کر دی
2016-18تک پمز میں 89 کروڑ 94 لاکھ روپے سے زائد مالیت کی ادویات خریدی اور جاری کی گئیں
مریضوں کو ادویات دینے سے متعلق ایک بھی رسید کسی ڈاکٹر نے جاری نہیں کی، دستاویز
اسپتال کے ریکارڈ میں کچھ جعلی رسیدیں موجود ہیں، دستاویز
رسیدوں پر مریضوں کے نام اور نمبر،ڈاکٹر کے دستخط اور مہر موجود ہی نہیں،دستاویز
پمز انتظامیہ نے مبینہ بےضابطگی سے متعلق جواب دینا بھی گوارہ نہ کیا،دستاویز
ذمہ داران کے خلاف انکوائری کی جائے،آڈیٹر جنرل آف پاکستان

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز