سی ڈی اے ماسٹر پلان 40-2020 سامنے آگیا

سی ڈی اے ماسٹر پلان 40-2020 سامنے آگیا

اسلام آباد: وفاقی ترقیاتی ادارے (سی ڈی اے) کے ماسٹر پلان 40-2020 کی تفصیلات سامنے آگئی ہیں۔

سی ڈی اے کی جانب سے بنی گالہ تجاوزات از خود نوٹس کیس میں سپریم کورٹ میں جمع کرائی گئی رپورٹ کے مطابق ماسٹر پلان2020-40 کے لیے بین الاقوامی اور مقامی 4 کنسورشیمز سے بولیاں موصول ہوئی ہیں۔ کامیاب بولی دہندگان کو پیپرا رولز کے مطابق ماسٹر پلان میں ترمیم کا کام سونپا جائے گا۔

سی ڈی اے رپورٹ کے مطابق ماسٹر پلان میں ترمیم کیلئے بین الاقوامی شہرت یافتہ ماہرین کی خدمات لی جارہی ہیں جبکہ فضلے اور گندگی تلف کرنے کیلئے 3 ویٹ لینڈ کنسٹرکشن پراجیکٹس مکمل ہوچکے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بائیو ڈی گریڈنگ کے عمل پر چلنے والے مزید 3 پراجیکٹس لگائے جائیں گے۔ فضلہ تلف کرنے کا جدید سسٹم نیسپاک کیساتھ مل کر جلد شروع کیا جائے گا۔

مزید پڑھیں: سپریم کورٹ نے اسلام آباد کے ماسٹر پلان میں تبدیلی کیلئے تجاویز طلب کر لیں

سی ڈی کی جانب سے جمع کرائی رپورٹ کے مطابق راول جھیل میں کورنگ نالے سے گندے پانی کی ملاوٹ روکنے کیلئے اقدامات کیے جا رہے ہیں ۔ راول جھیل میں گندگی پھیلانے والوں پر جرمانے عائد کیے گئے ہیں۔ راول جھیل پانی میں گندگی سے متعلق آئی سی ٹی اور پنجاب حکومت جواب جمع کرائیں گے۔

رپورٹ کے مطابق اسلام آباد بلڈنگ ریگولیشنز کے تحت اپریل سے اب تک 255 ملین ریوینو حاصل ہوچکا ہے۔ بلڈنگ ریگولیشن 2020 کے مطابق 1136 رہائشی عمارتوں کی درخواست میں سے 625 درخواستیں منظور ہوچکی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق کمرشل پلازوں اور مارکیٹس کی تعمیر کیلئے 48 درخواستوں میں سے 25 کو منظور کیا گیا ہے۔

خیال رہے کہ گزشتہ سال بنی گالہ میں تجاوزات سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران سرکاری وکیل نے سپریم کورٹ کو بتایا تھا کہ کورنگ نالے پر لگانے کے لیے 3 ٹریٹمنٹ پلانٹس کی منظوری ہوئی ہے اور 2 سال میں پلانٹس لگ جائیں گے۔

سرکاری وکیل کے جواب پر سپریم کورٹ کے جج جسٹس شیخ عظمت سعید نے ریمارکس دیے تھے کہ مطلب یہ کہ حکومت 2 سال تک راولپنڈی والوں کو گندا پانی پلائے گی؟

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز