ڈبلیو ایچ او کی پاکستان کو کورونا ویکسین فراہم کرنے کی یقین دہانی

مسافروں سے کورونا ویکسین لگوانے کا ثبوت نہ مانگیں، عالمی ادارہ صحت

فائل فوٹو

عالمی ادارہ صحت(ڈبلیو ایچ او) نے حکومت پاکستان کے نام بھیجے گئے مراسلے میں کورونا سے نمٹنے کیلئے اقدامات کی تعریف کی اور متوقع کورونا ویکسین بارے تعاون کی یقین دہانی بھی کرائی ہے۔

ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ پاکستان سے کورونا کے خلاف بھرپور تعاون جاری رہے گا۔ موثرومحفوظ  کورونا ویکسین کی تیاری کیلئے کوششیں جاری ہیں۔

مراسلے میں کہا گیا ہے کہ 2021 کے آغاز پر کورونا ویکسین محدود پیمانے پر دستیاب ہوں گی۔ عالمی سطح پر ویکسین کی منصفانہ تقسیم یقینی بنانا ہو گی۔

آغاز میں کورونا ویکسین کے درست اہداف کی بروقت نشاندہی ضروری ہے۔  ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ کورونا ویکسین کے استعمال میں پاکستان کی معاونت کریں گے۔

ڈبلیو ایچ او نے پاکستان کو متوقع ویکسین کے استعمال بارے تجاویز سے بھی آگاہ کیا ہے۔ پاکستان کو متوقع ویکسین بارے نو امور پر توجہ دینا ہو گی۔

عالمی ادارہ صحت نے کہا ہے کہ پاکستان متوقع کورونا ویکسین کے بارے پیشگی موثر پلاننگ کرے۔ استعمال کا مساوی و موثر عمل ترتیب دے۔

مراسلے میں درج ہے کہ پاکستان کورونا ویکسینیشن کے مخصوص اہداف کی بروقت نشاندہی کرے۔ ویکسین کی ملک گیر ترسیل کی اسٹریٹیجی وضح کرے۔

پاکستان متوقع کورونا ویکسین بارے قومی رابطہ کمیٹی تشکیل دے جو ویکسین بارے پلاننگ و رابطوں کی ذمہ دار ہو گی۔

ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ پاکستان کورونا ویکسین بارے قومی تکنیکی ورکنگ گروپ تشکیل دے۔ ویکسین کی ترسیل کیلئے لاجسٹک اور کولڈ چین سسٹم قائم کرے۔

ویکسین کی محفوظ ترسیل کیلئے سروس ڈیلیوری نظام تشکیل دیا جائے۔ ویکسینیشن مہم کیلئے سرویلنس اور مانیٹرنگ سسٹم بھی بنایا جائے۔

عالمی ادارہ صحت نے کہا ہے کہ  پاکستان ویکسینیشن کیلئے ہائی رسک آبادی کی پیشگی نشاندہی کرے اور ویکسین کے مضر اثرات جانچنے کیلئے سیفٹی سرویلنس سسٹم بنایا جائے۔

کورونا ویکسینیشن کیلئے تربیت یافتہ ٹیمیں تشکیل دی جائیں۔ ویکسین بارے ڈیمانڈ جنریشن، کمیونیکشن پلان تیار کیا جائے۔

ڈبلیو ایچ او نے کہا ہے کہ پاکستان کورونا ویکسینیشن بارے عوامی آگاہی کیلئے پیشگی مہم بھی چلائے۔

 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز