جرمنی: عدالت نے سابق امام مسجد سمیت چار افراد کو سزا سنادی

جرمنی: عدالت نے سابق امام مسجد سمیت چار افراد کو سزا سنادی

برلن: جرمنی کی ایک عدالت نے سابق امام مسجد اوراس کے تین دیگر ساتھیوں کو ناپسندیدہ سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے جرم میں سزا سنا دی ہے۔

عالمی خبر رساں ایجنسی کے مطابق عدالت نے سابق امام مسجد کو بمعہ تین ساتھیوں کے داعش کا رکن ہونے کا مجرم ٹھہرایا ہے۔

داعش، القاعدہ، طالبان اور دیگر تنظیموں کے 88 سے زائد دہشت گرد عناصر پر پابندیاں عائد

خبر رساں ایجنسی کے مطابق شمالی جرمنی کے علاقے سیلے میں عدالت نے احمد عبدالعزیز عبداللہ اے عرف ابو ولعا کو دہشت گرد تنظیم کی رکنیت رکھنے اور اس کی حمایت کرنے کا مجرم قرار دیا ہے۔

سابق امام مسجد کو ساڑھے دس سال قید کی سزا سنائی گئی ہے جب کہ اس کے دیگر تین ساتھیوں کو آٹھ سال قید کی سزا دی گئی ہے۔

جرمنی کی عدالت نے اپنے فیصلے میں کہا ہے کہ ابوولعا اور اس کے نیٹ ورک نے شمالی اور مغربی جرمنی میں نوجوانوں کو انتہا پسند بنایا اور انہیں داعش کے کنٹرول والے علاقوں میں بھیجا۔

داعش کے جنگجوؤں کی اطلاع دینے والے کیلئے بڑے انعام کا اعلان

37 سالہ عراقی شہری کے خلاف دیئے جانے والے فیصلے کے بعد ستمبر2017 میں شروع ہونے والے مقدمے کی سماعت مکمل ہو گئی ہے۔

عراقی شہری ابوولعا شمالی شہر ہلدیشیم کی ایک معروف مسجد کے امام تھے اور انہوں نے جرمنی میں دیگر کئی مساجد میں سیمینارز بھی منعقد کرائے تھے۔

داعش اور بھارت کے روابط بے نقاب

عالمی خبر رساں ایجنسی کے مطابق جرمن حکام نے مارچ 2017 میں معروف مسجد کا انتظام چلانے والی تنظیم پر پابندی بھی عائد کردی تھی۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز