وزیراعظم کی الیکشن کمیشن پر کڑی تنقید

وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ سینیٹ انتخابات اوپن بیلٹ طریقہ کار کے تحت کرانے کے لیے ہم نے پارلیمنٹ میں بل پیش کیا لیکن پارلیمنٹ نے ہماری حمایت نہ کی تو سپریم کورٹ گئے، الیکشن کمیشن نے سپریم کورٹ میں اوپن بیلٹ کی مخالفت کی۔

قوم سے براہ راست خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ ماضی میں ن لیگ اور پیپلز پارٹی کہتے رہے کہ سینیٹ الیکشن اوپن بیلٹ کے ذریعے ہوں۔ ن لیگ اور پیپلزپارٹی نے خود کہا کہ سینیٹ الیکشن میں پیسہ چلتاہے۔ دونوں جماعتوں نےاوپن بیلٹ کیلئےمیثاق جمہوریت پردستخط کیے۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ جج صاحبان نے بھی کہاسینیٹ الیکشن میں پیسہ چلتاہے۔ عدالت میں سب نےاکٹھےہو کر کہا کہ خفیہ بیلٹ ہونا چاہیے۔ انہی پارٹیوں نے پہلے کہا تھا کہ اوپن بیلٹ ہونا چاہیے۔

مزید پڑھیں:

عمران خان نے کہا کہ 40 سال سے سینیٹ الیکشن میں پیسہ چل رہا ہے۔ یہ کیسی جمہوریت ہے لیڈرشپ پیسے کے ذریعے سینیٹ میں آتی ہے۔ 2018 میں ہمارے20ممبران نے پیسے لے کرووٹ بیچے۔ ہم نے پیسے لینے والے 20 ممبران کو پارٹی سے نکالا۔

عمران خان نے کہا کہ  ان کوخوف تھا اب میں ان کے کرپشن کیسز پر آگے بڑھوں گا۔ یہ کیسز پرانے ہیں ہم نے نہیں بنائے۔ کہا تھا احتساب ہوگاتوسب اکٹھے ہوجائیں گے۔ پریشر ڈال رہے تھے میں بھی مشرف کی طرح این آراو دے دوں۔ ان کاون پوائنٹ ایجنڈا مجھے این آراو کیلئے بلیک میل کرنا ہے۔ اوپن بیلٹ کا مطالبہ کرنے والےخفیہ بیلٹ کیلئے اکٹھے ہوگئے۔ ان کااصل مقصد این آر او کیلئےاعتماد کے ووٹ کی تلوار لٹکانا ہے۔

 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز