بچی سے زیادتی کے بعد قتل کرنے والے مجرم کو دو بار سزائے موت

سزائے موت کا قیدی 18 سال بعد رہائی کی خبر ملنے پر ہلاک

انسداد دہشگردی کی عدالت نے بچی کو زیادتی کے بعد قتل کرنے والے مجرم کو 2 بار سزائے موت سزا سنائی ہے۔

اے ٹی سی بہاولپور نے 8 سالہ بچی سے زیادتی کے بعد قتل کیس کا فیصلہ سنا دیا۔

عدالت نےمجرم کو 2 بارعمر قید، 15 لاکھ جرمانہ اور 5 لاکھ  ہرجانہ ادا کرنےکا بھی حکم سنادیا۔

مجرم نے گزشتہ سال تھانہ نوشہرہ جدید کی حدود میں بچی کو زیادتی کےبعد قتل کردیا تھا۔

مزید پڑھیں: 7 سالہ بچی سے زیادتی کے ملزم کو سزائے موت

خیال رہے کہ گزشتہ سال دسمبر میں لاہور کی سیشن عدالت  نے 7 سالہ بچی سے زیادتی کرنے والے مجرم کو  2 بار عمر قید اور 6 لاکھ جرمانہ کی سزا سنائی تھی۔

عدالت نے 60 سالہ لیاقت نامی شخص پر 7 سالہ بچی سے زیادتی کا جرم ثابت ہونے پر سزا سنائی تھی۔ 60 سالہ شخص کے خلاف 2018 میں لاہور کے تھانہ مانگا منڈی میں ایف آئی آر درج کی گئی تھی۔

پراسیکیوٹر  تبسم صوفی نے عدالت کو بتایا تھا کہ مجرم 7 سالہ بچی کو مسجد سپارہ پڑھنے کے لیے جاتے ہوئے گلی میں ملا تھا۔ مجرم بچی کو بھلا پھسلا کر مسجد کے واش روم میں لے گیا اور زیادتی کا نشانہ بنایا۔

مزید پڑھیں: زیادتی کے بعد بچی کا قتل، عدالت نے مجرم کو سزائے موت سنا دی

پراسیکیوٹر  کی جانب سے دلائل مکمل ہونے کے بعد ایڈیشنل اینڈ سیشن جج سردار محمد اقبال ڈوگر نے فیصلہ سنایا تھا۔ عدالتی فیصلے کے مطابق  ڈی این اے رپورٹ میں لیاقت کا جرم ثابت ہوا تھا۔

عدالتی فیصلے پر پراسیکیوٹر کا کہنا تھا کہ  بچی کا والد عارف کیس سے منحرف ہوگیا تھا اور پیروی چھوڑ دی تھی۔ ریاست نے خود عدالتی کارروائی چلائی اور مجرم کوسزا دلوائی گئی۔

پراسیکیوٹر  تبسم صوفی کا مزید کہنا تھا کہ عدالت نے ڈی این اے رپورٹ کی روشنی میں اور دیگر شواہد کی بنیاد پر مجرم کو سزا سنائی۔

متعلقہ خبریں