فیس بک کا 18سال سے کم عمر صارفین کیلئے بڑا فیصلہ

فائل فوٹو

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ فیس بک نے فیصلہ کیا ہے کہ کمپنی 18 سال سے کم عمر صارفین کواپنے پلیٹ فارم پر اشتہارات دکھانا بند کر دے گی۔ عمر کے درست تعین کیلئے دیگر معلومات کے ساتھ مصنوعی ذہانت کا بھی استعمال کیا جائے گا۔

اس سے قبل انسٹاگرام نے بھی بچوں کیلئے اپنی پالیسی تبدیل کی تھی۔ انسٹا پر بڑے اٹھارہ سال سے کم عمر صارفین کو ان کی اجازت کے بغیر میسج نہیں بھیج سکیں گے۔

فیس بک نے فیصلہ کیا ہے اشتہار چلانے والی کمپنیوں کو اجازت نہیں دی جائے گی کہ وہ 18 سال یا اس سے کم عمر صارفین کو اشتہار دکھا سکیں۔

ناقدین کا کہنا ہے کہ فیس بک کی سب کو اشتہار دکھانے کی پالیسی سے بچوں کی دماغی صحت اور نشونما پر برے اثرات ہو سکتے ہیں۔

کمپنی نے صارفین کے ڈیٹا کے متعلق فی الحال کوئی نیا فیصلہ نہیں کیا۔انسٹاگرام نے بھی16 سال سے کم عمر صارفین کو خودکار طریقے سے پرائیویٹ کر دیا ہے۔ انسٹاگرام پر18 سال سے کم عمر افراد کو میسج بھیجنے کی صورت میں آپ کو نوٹیفکیشن آئے گا۔

اس سے قبل یوٹیوب نے بھی بچوں کیلئے الگ پیلٹ فارم’یوٹیوب کڈ‘ لانچ کیا تھا۔ مختلف سوشل میڈیا ویب سائٹس بچوں کے متعلق خصوصی اقدامات اٹھا رہی ہیں لیکن کسی پاس صارفین کی درست شناخت کے متعلق کامیاب طریقہ کار نہیں۔

ایسی ویب سائٹ جو13 سال کے صارفین کیلئے نہیں ہیں وہ  درست عمر کی تصدیق کرنے میں اکثر ناکام رہتی ہیں۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز