گوگل کا نیا آفس 2 ارب ڈالر کا ہوگا

دنیا میں سب سے زیادہ استعمال کیے جانے والا سرچ انجن گوگل نے 2.1 ارب ڈالرز میں اپنا نیا دفتر خریدنے کا اعلان کیا ہے۔

گوگل اربوں روپے کی مالیت کا آفس امریکی شہر نیویارک کے علاقے مین ہیٹن میں خرید رہا ہے۔

رپورٹ کے مطابق کے مطابق مین ہیٹن کے ویسٹ سائیڈ پر نئی عمارت کی خریداری کا یہ معاہدہ کورونا کی عالمی وبا کے آغاز کے بعد سے بڑا معاہدہ ہے جو کہ امریکی تاریخ کی سب سے مہنگی ڈیل بھی ہے۔

یہ بھی پڑھیں: گوگل کی 2 ماہ میں چوتھی وارننگ

کمپنی نے ایک بلاگ پوسٹ میں کہا ہے کہ نیویارک ہیڈ کوارٹر اور ہاؤس سیلز اور پارٹنرشپ ٹیموں کے طور پر کام کرنے کے لیے گوگل 2023 کے وسط تک مین ہیٹن میں سینٹ جان ٹرمینل کھولنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

نیو یارک سٹی میں گوگل کے ملازمین کی تعداد 12 ہزار ہے ، جو کیلیفورنیا آفس کے بعد گوگل کی دوسری سب سے بڑی افرادی قوت ہے۔

ایک طرف کمپنی کورونا کے بعد ملازمین کے لیے نئی عمارت خرید رہی ہے وہیں کمپنی مبینہ طور پر ان ملازمین کی تنخواہوں میں کٹوتی کرنے پر غور کر رہی ہے جو مستقل طور پر آن لائن کام کرنے کا انتخاب کرتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:فرانس: گوگل پر 9 ارب سے زائد کا جرمانہ

تاہم گوگل نے اپنے کارکنوں کی دفتر میں واپسی اگلے جنوری تک موخر کر دی ہے۔

گوگل، فیس بک، ایپل، ایمازون ڈاٹ کام اور دیگر ٹیک کمپنیاں حالیہ برسوں میں امریکا میں سب سے مہنگی جگہوں کو کرائے پر لیتی یا انہیں خریدتی دکھائی دی ہیں۔

 

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز