168ملین سال پرانی ڈائنو سار کی نئی نسل دریافت

 مراکش سے  ڈائنو سار کی نئی نسل کا اب تک کا قدیم ترین فوسل دریافت کر لیا گیا ہے

نیچرل ہسٹری میوزیم کے محققین نے مراکش کے مڈل اٹلس پہاڑوں میں عجیب فوسل پایا۔ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ فوسل بکتر بند سپائک ڈائنوسار کی ایک نئی نسل سے تعلق رکھتا ہے

محقیقین کے مطابق یہ 168 ملین سال پرانا ایک غیر معمولی  قدیم ترین اینکلوسار نمونہ ہے۔

جس چیز نے اسے منفرد بنایا وہ  فوسل  میں پسلیوں کی ہڈیوں میں ملنے والی سپائکس کا ثبوت  ہیں ۔ جو اینکلوسار کے لیے غیر معمولی ہے، کیونکہ یہ عام طور پر جلد کے ٹشو سے جڑا ہوتا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ اینکلوسار بکتر بند ڈا ئنوسار کا ایک متنوع گروہ تھا ۔ جو 145 سے 66 ملین سال پہلے کے  پورے  دور میں موجود تھا۔

تاہم ، اس سے پہلے ان کے بارے میں بہت کم شواہد موجود ہیں۔ نئے ملنے والے فوسل کو  اس قسم کے ڈائنو سار کے فوسل کی پہلی مثال کہا جاسکتا ہے۔

یہ دلچسپ دریافت مراکش کے مڈل اٹلس پہاڑوں میں اسی مقام پر کی گئی جہاں لندن میں نیچرل ہسٹری میوزیم (این ایچ ایم) کے محققین نے پہلے پایا جانے والا قدیم ترین سٹیگوسور دریافت کیاتھا۔

این ایچ ایم کی ایک محقق نے  اسے نئی نسل قرار دیتے ہوئے اس کا نام ‘سپیکومیلس افر’ رکھا ہے ، جس کا مطلب ہے سپائکس کا کالر اور افریقہ

محققین کا کہنا ہے کہ پہلے ہم نے سوچا کہ نمونہ ایک سٹیگوسار کا حصہ ہو سکتا ہے  کیونکہ پہلے انہیں اسی مقام پر پایا گیا تھا۔ لیکن قریب سے معائنہ کرنے پر ، ہم نے محسوس کیا کہ جیواشم کسی بھی پہلےسے موجود نسل کے برعکس تھا جو ہم نے پہلے کبھی نہیں دیکھا تھا۔

نمونہ اتنا غیر معمولی تھا کہ پہلے محققین نے سوچا کہ کیا یہ جعلی ہو سکتا ہے ، لیکن سی ٹی اسکینوں کی ایک سیریز نے تصدیق کی کہ یہ ‘حقیقی فوسل’ ہے۔

متعلقہ خبریں

ٹاپ اسٹوریز