کورونا: اومی کرون، متاثرہ مریض چکمہ دیکر ملک سے فرار، حکام کی دوڑیں

کورونا: اومی کرون، متاثرہ مریض چکمہ دیکر ملک سے فرار، حکام کی دوڑیں

نئی دہلی: عالمی وبا قرار دیے جانے والے کورونا وائرس کے نئے ویریئنٹ اومی کرون سے متاثرہ مریض چکمہ دے کر ملک سے فرار ہو گیا جس کے بعد پولیس سمیت دیگر متعلقہ اداروں کی دوڑیں لگ گئیں۔

ڈبلیو ایچ او نے اومی کرون کے خطرے سے خبردار کر دیا

ہم نیوز نے بھارت کے مؤقر انگریزی اخبار دی ٹائمز آف انڈیا کے حوالے سے بتایا ہے کہ ملک میں شناخت ہونے وال اومی کرون کا پہلا متاثرہ 66 سالہ مریض قرنطینہ سینٹر کے بعد ملک سے بھی فرار ہو گیا ہے۔ یہ واقعہ بھارتی ریاست کرناٹک میں پیش آیا ہے۔

میڈیا رپورٹ کے مطابق 20 نومبر کو جنوبی افریقہ سے کرناٹک پہنچنے والے دو افراد میں اومی کرون ویریئنٹ کی تشخیص ہوئی تھی جس کے بعد انہیں ہوٹل میں ٹھہرایا گیا تھا جن میں سے ایک مریض ملک سے ہی فرار ہو گیا ہے۔

ریاست کے وزیر صحت کا کہنا ہے کہ فرار ہونے والے شخص سے رابطے میں دس افراد آئے تھے جنہیں شناخت کرلیا گیا ہے اور ان کے ٹیسٹ بھی کیے گئے ہیں جو منفی آئے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق ملک سے فرار ہونے والے متاثرہ شخص کا قرنطینہ سینٹر میں سرکاری ڈاکٹر نے معائنہ بھی کیا تھا اور انہوں نے تصدیق کی تھی کہ اس میں کورونا کی علامات ہیں۔ ڈاکٹر کی ہدایت پر متاثرہ شخص کو سیلف آئی سولیشن کے لیے کہا گیا تھا۔

اومی کرون:جنوبی افریقہ میں یومیہ کورونا کیسز کی تعداد دگنی

اومی کرون سے متاثرہ شخص کا ایک مرتبہ پھر سیمپل ٹیسٹ کے لیے لیا گیا تو دوسرے دن اس نے پرائیوٹ لیب سے ٹیسٹ کرایا اور منفی رپورٹ ایئرپورٹ حکام کو دکھا کر ملک سے فرار ہو گیا۔ اس شخص کے ٹیسٹ کی جب سرکاری رپورٹ آئی تو اس میں تصدیق ہوئی کہ وہ اومی کرون سے متاثرہ مریض ہے۔

ملک سے فرار ہونے والے متاثرہ شخص کی بابت میڈیا رپورٹس میں بتایا گیا ہے کہ وہ جوہانسبرگ کی ایک ادویہ ساز کمپنی کا نمائندہ بھی ہے۔

بھارتی حکام اور پولیس کی متاثرہ شخص کے فرار ہونے کی اطلاع پر دوڑیں لگ گئی ہیں لیکن اس وقت وہ ہاتھ ملنے کے سوا کچھ نہیں کرسکتے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق بھارتی حکام اور پولیس فرار ہونے والے شخص سے رابطے میں آنے والے افراد کو شناخت کر رہے ہیں اور جس ملک کا اس نے سفر کیا ہے وہاں کے حکام سے رابطے کی کوشش میں مصروف ہیں تاکہ اسے تحویل میں لے کر قرنطینہ کرایا جا سکے۔

کورونا: اومی کرون کے خلاف کام کرنے والی دوا دریافت

واضح رہے کہ موڈرنا کے سی ای او سٹیفین بنسل نے معروف اخبار فنانشل ٹائمز کو ایک انٹرویو دیتے ہوئے کہا تھا کہ کورونا وائرس کی موجودہ ویکسینز جتنی ڈیلٹا ویرینٹ کے لیے موثر تھیں، اتنی ان کے نئے وائرس کے خلاف مؤثر ہونے کے امکانات نہیں ہیں۔

متعلقہ خبریں