ایران سے پاکستان 500 اشیا آتی اور صرف5 جاتی ہیں، تجارتی عدم توازن کا انکشاف

اسلام آباد: پاکستان اور ایران کے درمیان تجارتی عدم توازن کے متعلق ہوشربا انکشافات ہوئے ہیں۔ اعداد و شمار کے تحت پاکستان سے صرف پانچ اشیا وہاں جاتی ہیں جب کہ ایران سے 500 اشیا یہاں آتی ہیں۔

پاکستان ایران نے مشترکہ ریپڈ ری ایکشن فورس بنانے کا اعلان کر دیا

ہم نیوز کے مطابق یہ ہوشربا انکشاف نائب صدر کوئٹہ چیمبر نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے تجارت کے منعقدہ اجلاس میں کیے ہیں۔ اجلاس کی صدارت سینیٹر ذیشان خانزادہ نے کی۔

سینیٹر ذیشان خانزادہ کی زیر صدارت منعقدہ قائمہ کمیٹی برائے تجارت کے اجلاس میں نائب صدر کوئٹہ چیمبر نے کہا کہ ایران ہم سے موسمی پھل اور چاول تک لینے کے لیے تیار نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایران نے کبھی ہم سے تعاون نہیں کیا ہمیشہ ہم سے تعاون مانگا۔

پاک ایران سرحد: تیسری مارکیٹ کا باضابطہ افتتاح ہو گیا

نائب صدر کوئٹہ چیمبر نے زور دے کر کہا کہ بارٹر ٹریڈ میں صحیح اور درست پالیسی کی ضرورت ہے۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ ایران سے تجارت کے لیے کمیٹی بنائی جائے جس میں بلوچستان کی نمائندگی ہو۔

ہم نیوز کے مطابق منعقدہ اجلاس میں پاکستان پیپلزپارٹی سے تعلق رکھنے والے سینیٹر سلیم مانڈوی والا نے انکشاف کیا کہ چیئرمین سینیٹ کے علاقے میں چائے اور بسکٹ بھی ایران سے آتے ہیں۔

ایران نے پاکستانی کینو پر عائد درآمدی پابندی ختم کردی، شاہ محمود

سابق وفاقی وزیر خزانہ سلیم مانڈوی والا نے اجلاس میں زور دے کر کہا کہ جب افغانستان کے لیے پالیسی بنائی جاتی ہے تو ایران پر بھی بنائی جائے۔

متعلقہ خبریں