شوق سے آئی ایم ایف نہیں گئے، کیا پہلی حکومتیں نہیں گئیں؟شوکت ترین

وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا ہےکہ شور مچ رہا ہے کہ آئی ایم ایف نے ہمیں برباد کر دیا، شوق سے آئی ایم ایف  نہیں گئے، پوچھنا چاہتا ہوں کہ کیا پہلی حکومتیں آئی ایم ایف کے پاس نہیں گئیں؟

قومی اسمبلی میں اظہار خیال کرتے ہوئے وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ  پہلی 2 حکومتیں آئی ایم ایف کے پاس گئیں، شورمچایاجارہاہےاسٹیٹ بینک کی خودمختاری گروی رکھ دی،ہم نے 32 ارب دینے تھے، وزیراعظم دوستوں کے پاس گئے لیکن اتنی رقم نہیں تھی، ہمیں آئی ایم ایف کے پاس جانا پڑا،کورونا اس صدی کا سب سے بڑا بحران تھا،دنیا مانتی ہے پاکستان نے بہترین طریقے سے نمٹا۔

احسن اقبال نے کہا لوگ گاڑیوں سے موٹر سائیکل پر آ گئے ہیں، حقائق دیکھ لیا کریں، گاڑیوں کی ریکارڈ سیل ہوئی ہے،برآمدات ،درآمدات اور بچت کا گیپ ہے۔

شوکت ترین  نے کہا کہ ملک ترقی کر رہا ہے، مہنگائی پوری دنیا میں ہے، ہم اپنے ٹیکس سسٹم کو ٹھیک کرنے کی کوشش کر رہے ہیں،ہم غریب لوگوں کا بھی خیال رکھیں گے۔

وزیر خزانہ شوکت ترین نے کہا کہ ہیلتھ کارڈ، کامیاب پاکستان پروگرام سب ہماری حکومت کر رہی ہے،ہم جو کہہ رہے ہیں اس پر کھڑے ہیں، معیشت بہتر ہو رہی ہے،4فصلوں  سے بمپر کراپ حاصل ہوئی۔

کورونا کے باوجود گروتھ 4 فیصد ہے،اس باراکانومی 5فیصدگروتھ کرے گی،رواں سال ایکسپورٹ 31بلین تک جائیں گی،ملک میں موٹرسائیکلوں کی ریکارڈسیل ہورہی ہے۔

متعلقہ خبریں