جب تک نیب ہے ملک نہیں چلے گا، صدر پارلیمانی نظام کی نفی کر رہے ہیں ، شاہد خاقان عباسی

خط وزرا اور چیف جسٹس کو دکھایا جا سکتا ہے تو پارلیمنٹ کو کیوں نہیں؟ شاہد خاقان

رہنما مسلم لیگ ن شاہد خاقان عباسی کا کہنا ہے کہ گزشتہ روز صدر نے نیب ترمیمی بل دستخط کیے بغیر واپس کردیا، نیب کا ہر کیس جھوٹا ہوتاہے، صدر مملکت سے گزارش ہے کہ نیب کا ریکارڈ منگوا لیں۔

نیب کورٹ اسلام آباد کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے خاقان عباسی نے کہا کہ نیب کا ادارہ سیاسی توڑ پھوڑ کےلیے استعمال ہوا ہے، صدر نے چیئرمین نیب کو بلا کر کبھی پوچھا کہ کیا کیس بنائے ہیں؟ جب تک نیب ہے تب تک ملک نہیں چلے گا، صدر کو کہنا چاہیے کہ نیب نے ملک کی تباہی کے سوا کچھ نہیں دیا، پوری پارلیمان کا منظور شدہ بل درست نظر نہ آنا سمجھ سے بالاتر ہے۔

شاہد خاقان کا کہنا تھا کہ سیاسی جوڑ توڑ نیب کی وجہ سے ہوتی رہے گی، نیب سے پچھلے 4 سال کی تفصیلات لینی چاہیے، نیب ترامیم میں بیشتر گزشتہ حکومت نے کیں۔ عارف علوی پاکستان کے صدر بنیں، پی ٹی آئی کے نہیں، ملک کا صدر پارلیمان کی نفی کرنے پر مجبور ہے۔

ملک کا صدرپارلیمان کی نفی کرنے پرمجبورہے، نیب نے ملکی معیشت کوتباہ کیا، لوڈشیڈنگ میں بہت حد تک کمی آئی ہے، تیل کی خرید سے متعلق معاملے کو دیکھ رہے ہیں، عمران خان کو تھریٹ آئی ہے حکومت اس کا سامنا کرے گی، عمران خان کو پہلے بھی تھریٹ آئی ان کے ثبوت نہیں ملے، رانا ثنااللہ عمران خان کو تحفظ فراہم کریں گے۔

متعلقہ خبریں