کراچی انتخاب میں گولیاں چلیں لوگ مرے ، ضمنی انتخابات میں ایسا ہوا تو 12 رکنی اتحاد ذمہ دار ہوگا، شیخ رشید

سیشن کورٹ اسلام آباد میں پی ٹی آئی لانگ مارچ کے دوران تھوڑ پھوڑ کیس کی سماعت ہوئی، جس میں سابق وزیرداخلہ شیخ رشید ، پی ٹی آئی رہنما شہریار آفریدی اور خرم نواز کی ضمانت قبل ازگرفتاری منظور کر لی گئی۔

سیشن کورٹ اسلام آباد کا ملزمان کو 5،5 ہزار روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کرانے کا حکم، سیشن جج کامران بشارت مفتی نے پی ٹی آئی رہنماوں کی درخواست ضمانت پر سماعت کی، تھانہ کوہسار میں شیخ رشید، مراد سعید، شہریار آفریدی سمیت دیگر پر مقدمہ درج ہے۔

پیشی کے دوران سابق وزیرداخلہ شیخ رشید نے سندھ بلدیاتی انتخابات پر بات کرتے ہوئے کہا کہ نوابشاہ سے بیلٹ باکس اور پریذائیڈنگ افسران اٹھاکے لے جاتے ہیں، لاہور اور فیصل آباد کے ضمنی انتخابات میں ذمہ داران بہتر انتظامات کریں، اگر 17 جولائی کو اسی طرح کی چور بازاری اور غنڈہ گردی ہوئی تو انارکی پھیلے گی۔

یہ بھی پڑھیں: لانگ مارچ: توڑ پھوڑ کیس، عمران خان کو ضمانت مل گئی

سابق وزیرداخلہ نے کہا کہ ایسی صورتحال میں جمہوریت کو نقصان پہنچتا ہے، معیشت دم توڑ دے گی، ایم کیو ایم کو تو کل پتہ لگ جانا چاہیے تھا،
اے این پی کو پتہ لگ گیا ، بی اے پی کہیں دکھائی نہیں دے رہی، کراچی میں انتخاب ہوئے گولیاں چلی اور لوگ مرے ہیں، ضمنی انتخابات میں اگر کوئی ایسی صورتحال ہوئی تو 12 رکنی اتحاد ذمہ دار ہوگی۔

ایک دن میں 2،2 عدالتوں میں جارہا ہوں، عالمی سازش سے عمران خان کے خلاف عدم اعتماد لایا گیا، عمران خان کی سیاست عدم اعتماد تحریک اور سازش سے بڑی ہے، ایم کیو ایم نے کہا کہ سندھ کے انتخابات میں بیلٹ باکس اٹھا کر لے کر گئے، گزشتہ روز بھی سندھ میں انتخابات کے دوران2 افراد جاں بحق ہو گئے، 13 رکنی سازشی اتحاد حکومت میں ہے۔

متعلقہ خبریں