ملک دیوالیہ ہونےکے خطرے سے نکل چکا، آئی ایم ایف سے دوقسطیں ایک ساتھ ملیں گی، مفتاح

عمران خان نے آئی ایم ایف سے معاہدہ کیا اور خلاف ورزی کی، مفتاح اسماعیل

وفاقی وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے ملک دیوالیہ ہونے کے خطرے سےنکل چکا، آئی ایم ایف سے  ساتویں اور  آٹھویں قسط  ایک ساتھ ملے گی۔

اسلام آباد میں کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ آئی ایم ایف سے  ساتویں اور  آٹھویں قسط کو ملا دیا ہے۔ ساتویں قسط 90 کروڑ ڈالر اور آٹھویں قسط تقریباً ایک ارب ڈالر کی ہے۔

مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ حالات اب بھی مشکل لیکن ہم بہتری کی طرف جارہے ہیں، ملک دیوالیہ ہونےکے خطرے سے نکل چکا ہے، ہم  پورے پاکستان کے دکانداروں کو  ٹیکس نیٹ میں لا رہے ہیں، سپرٹیکس اس پر لگایا ہے جس کی آمدن زیادہ ہے۔میں نے وزیرِ اعظم شہباز شریف کے بیٹوں اور اپنی فیکٹریوں پر ٹیکس لگایا

ان کا کہنا ہے کہ جب ہم آئے تو پاکستان کو 4 ریکارڈ بجٹ خساروں کا سامنا تھا۔ پاکستان پانچویں خسارے کا متحمل نہیں ہوسکتا تھا، ملک کو ترقی کی راہ پر ڈالنےکے لیے ہمیں مشکل فیصلے لینے  پڑے۔وزیرِ اعظم کا کہنا ہے کہ یاد رکھو ہمارا مقصد خود کفالت ہے۔

وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے  کہ اگر ٹیکس نہیں جمع کرسکتے تو خودداری کی بات نہ کریں، پونے چار برسوں میں 20 ہزار  ارب روپے قرض لیا گیا، آج ہمیں 4 ہزار ارب روپے ڈیٹ سروسنگ کرنی پڑ رہی ہے۔

ان کا کہنا  ہے کہ پیٹرول اور ڈیزل پر 120 ارب روپےکی سبسڈی ملک کو دیوالیہ کردیتی، قوم پر فخر ہےکہ اس نےسمجھا کہ ملک دیوالیہ پن کی نہج پر تھا اس لیے پیٹرول مہنگا کرنا پڑا، ملک کی ترقی کے لیے سرمایہ داروں کو حصہ ڈالنا ہوگا۔

 

متعلقہ خبریں