جمیل احمد گورنر اسٹیٹ بینک تعینات، صدر مملکت کی منظوری

جمیل احمد گورنر اسٹیٹ بینک تعینات کر دئیے گئے، صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے وزیراعظم شہبازشریف کی ایڈوائس پرمنظوری دی، صدر مملکت نے یہ منظوری آئین کے آرٹیکل 48، ایک اور اسٹیٹ بینک آف پاکستان ایکٹ کے سیکشن 11،اے ایک کے تحت دی۔

وزارت خزانہ کے نوٹیفکیشن کے مطابق جمیل احمد جو اس وقت ڈپٹی گورنر سٹیٹ فرائض انجام دے رہے تھے، انہیں 25 اکتوبر 2018 کو تین سال کیلئے ڈپٹی گورنر تعینات کیا گیا تھا۔۔جمیل احمد کا 30 سال سے زائد مختلف اہم عہدوں پر سٹیٹ بنک آف پاکستان اور سعودی مرکزی بنک میں تجربہ ہے۔جمیل احمد نے 1988میں پنجاب یونیورسٹی سے ایم بی اے کیا، وہ 1994 سے آئی سی ایم اے پاکستان کے فیلو ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: شہباز گل کے جسمانی ریمانڈ کی استدعا مسترد ، دوبارہ میڈیکل کرانے کا حکم

جمیل احمد نے بطور ڈپٹی گورنر سٹیٹ بینک بینکوں کی ڈیجیٹلائزیشن کرنے میں کلیدی کردار ادا کیا، رضا باقر کی مدت پوری ہونے کے بعد مستقل گورنر اسٹیٹ بینک کا عہدہ مئی سے خالی تھا، ڈاکٹر مرتضی سید قائم مقام گورنر اسٹیٹ بینک کے فرائض انجام دے رہے تھے۔


26 سال سے زیادہ کا تجربہ رکھنے والے جمیل احمد ایک ماہر بینکر ہیں، وہ اس سے قبل مرکزی بینک کے ڈپٹی گورنر کے طور پر بھی خدمات سرانجام دے چکے ہیں۔

جمیل احمد نے 11 اپریل 2017 سے 15 اکتوبر 2018 تک اسٹیٹ بینک کے ڈپٹی گورنر (بینکنگ اور ایف ایم آر ایم) کے طور پر خدمات سرانجام دی تھیں۔

بطور ڈپٹی گورنر اسٹیٹ بینک تعینات ہونے سے قبل انہوں نے آپریشنز، بینکنگ پالیسی اینڈ ریگولیشنز ڈپارٹمنٹ، ڈیولپمنٹ فنانس ڈپارٹمنٹ اور فنانشل ریسورس مینجمنٹ ڈپارٹمنٹ گروپ ہیڈ کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔

وہ سعودی عربین مانیٹری ایجنسی (سما) کے لیے بھی کام کر چکے ہیں۔

مرکزی بینک کی ویب سائٹ کے مطابق انہوں نے پاکستان اور سعودی عرب کے بینکنگ سسٹمز کی پالیسی، ریگولیٹری فریم ورک کی تشکیل اور ان کے مالی استحکام کی نگرانی میں نمایاں کردار ادا کیا۔

یہ بھی پڑھیں: توشہ خانہ اور ممنوع فنڈنگ عمران خان کا کچھ نہیں بگاڑ سکتی، شیخ رشید

انہوں نے پاکستان میں الیکٹرانک منی انسٹی ٹیوشنز کے لیے ضوابط کی تشکیل اور اجرا کے عمل کی نگرانی کی۔

ڈان نیوز کے مطابق نئے تعینات ہونے والے گورنر اسٹیٹ بینک نے فوری ادائیگیوں کے نظام ‘راست’، ڈیجیٹل بینکنگ کے ضوابط اور اسٹیٹ بینک کے نالج مینجمنٹ سسٹم کے نفاذ کے لیے قائم اسٹیئرنگ کمیٹیوں کے چیئرمین کے طور پر بھی خدمات انجام دیں۔

جمیل احمد نے ایس بی پی اور ورلڈ بینک کی جانب سے مشترکہ تیار کی گئی پاکستان کی قومی ادائیگی کے نظام کی حکمت عملی کی تشکیل اور اجرا کے عمل کی بھی نگرانی کی۔

نئے تعینات ہونے والے گورنر اسٹیٹ بینک جمیل احمد نے 1988 میں پنجاب یونیورسٹی سے ایم بی اے مکمل کیا تھا۔

وہ 1994 سے انسٹی ٹیوٹ آف کاسٹ اینڈ مینجمنٹ اکاؤنٹنٹس آف پاکستان کے فیلو ممبر، 1993 سے انسٹی ٹیوٹ آف بینکرز پاکستان کے فیلو ممبر اور 1992 سے فیلو ممبر انسٹی ٹیوٹ آف کارپوریٹ سیکریٹریز آف پاکستان ہیں۔

متعلقہ خبریں