دہشت گردوں سے مذاکرات کی کس نے پیش کش دی؟ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

اسلام آباد: جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا ہے کہ دہشت گردوں سے مذاکرات کرنے کی کس نے پیش کش دی ؟ وفاقی و صوبائی حکومتوں کو ججز، بیوروکریٹس سمیت تمام اداروں کو گاڑیاں دینا بند کر دینا چاہیے۔

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے عالمی جوڈیشل کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عالمی ادارے کی رپورٹ کے مطابق ایک ہزار بچیوں کے اسکولوں پر دہشت گردوں نے حملہ کیا۔ اب ان دہشتگردوں سے کس کے کہنے پر اور کیا مذاکرات کر رہے ہیں اور ان دہشتگردوں سے مذاکرات کی کس نے پیش کش دی ؟

انہوں نے کہا کہ سوات میں بچیوں کے جس اسکول پر حملہ ہوا وہ 5 سال تک بند رہا۔ قرآن پاک میں اللہ تعالیٰ نے خواتین کے احترام کا حکم دیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں: اسلام آباد پر چڑھائی کریں گے تو کیا ہم لیٹ جائیں؟ وزیر داخلہ

جسٹس قاضی فائز عیسیٰ نے کہا کہ غریب تو اپنا حصہ ڈال رہا ہے کیونکہ وہ پیدل چلتا ہے، سائیکل پر سفر کرتا ہے۔ وفاقی وصوبائی حکومتوں کو چاہیے ججز، بیوروکریٹس سمیت تمام اداروں کو گاڑیاں دینا بند کر دیں اور وہ پیسہ سائیکل، پیدل چلنے کے راستوں اور پبلک ٹرانسپورٹ پر خرچ کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ موسمیاتی تبدیلی سے نمٹنے کے لیے دنیا کی طرف دیکھنے کے بجائے خودعملی اقدامات کرنا ہوں گے۔

متعلقہ خبریں