سارہ قتل کیس:ملزم شاہنواز اور والد ایاز امیر کا مزیدجسمانی ریمانڈ منظور

اسلام آباد: پاکستانی نژاد کینیڈین اہلیہ کے قتل کیس میں ملزم شاہنواز امیر اور والد ایاز امیر کاجسمانی ریمانڈ منظور کر لیا گیا۔ ایاز امیر کی اہلیہ کو تین روز کی عبوری ضمانت مل گئی۔

سیشن کورٹ اسلام آباد میں اہلیہ کو قتل کرنے سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی۔سینئر صحافی ایاز امیر اور  مرکزی ملزم شاہنواز امیر سیشن کورٹ اسلام آباد میں پیش ہوئے۔

تفتیشی افسر نے عدالت کو بتایاکہ ملزمان سے  پاسپورٹ اور بینک تفصیل کو برآمد کرنا ہے۔7دن کے جسمانی  ریمانڈ کی استدعا ہے۔

یہ بھی پڑھیں:سارہ قتل کیس، ایاز امیر ایک روزہ جسمانی ریمانڈ پر پولیس کے حوالے

جج نے استفسار کیا کہ ایاز امیر کا اس کیس سے کیا تعلق ہے؟ تفتیشی افسر نے بتایا کہ ملزم ایاز امیر کو مقتولہ کے چچا اور چچی نے نامزد کیا ہے۔ملزم ایاز امیر کا تعلق چکوال سے ہے اور ملزم شاہنواز امیر کا والد ہے

جج نے سوال  کیا کہ مقتولہ کے والدین کدھر ہیں؟ عدالت کو بتایا گیا کہ مقتولہ کے والدین کینڈا میں ہیں اور کل تک وہ پاکستان پہنچ جائیں گے۔

جج نے استفسار کیا کہ کیس میں وکیل کون ہے، صحافی ایاز امیر نے جواب دیا کہ میں خود ہی اپنا کیس لڑوں گا۔بہت بڑا صدمہ پہنچا وقوعہ کی اطلاع میں نے خود پولیس کو دی۔وقوعہ کے وقت میں چکوال میں تھا اور فوری طور پر آئی جی کو آگاہ کیا۔آئی جی نہیں تھے تو ایس پی رورل کو اطلاع دی۔

ان کا کہنا ہے کہ مجھے خدشہ تھا کہ وقوعہ میں کوئی اور زخمی نہ ہو۔پولیس کو سارا راستہ میں نے ہی بتایا۔پولیس نے مقدمہ درج کیا اور اپنا موقف دیا۔

یہ بھی پڑھیں:بیٹے کےہاتھوں بہو کےقتل کیس میں صحافی ایازامیر گرفتار

عدالت نے  پولیس کی استدعا پرمرکزی ملزم شاہنواز امیر کا تین روزہ جبکہ ایاز امیر کا ایک روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کر لیا۔ جبکہ سینئر صحافی ایاز امیر کی اہلیہ ثمینہ شاہ کی تین روز کیلئے عبوری ضمانت منظور کی گئی۔

عدالت نے  ملزمہ کو شامل تفتیش ہونے کا حکم دیتے ہوئے ملزمہ کو پچاس ہزار روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کرانے کی ہدایت کی۔

 

متعلقہ خبریں