پاکستان میں سرمایہ کاروں کیلئے سازگار ماحول بنائیں گے، وزیر اعظم

استنبول: وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا ہے کہ پاکستان میں سرمایہ کاروں کے لیے سازگار ماحول بنائیں گے۔

وزیر اعظم شہباز شریف نے استنبول میں پاک ترکیہ بزنس کونسل کے اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز ترکیہ صدر طیب ایردوان سے خوشگوار ملاقات ہوئی اور استنبول میں گزشتہ روز کی تقریب پاک ترکیہ بہترین تعلقات کی مثال ہے۔ ترکیہ کے صدر سے باہمی تعلقات کے فروغ سمیت اہم امور پر بات ہوئی۔

انہوں نے کہا کہ بزنس کمپنیوں کا یہ اجلاس تجارت کے فروغ کے لیے معاون ثابت ہو گا اور کچھ روز قبل ترکیہ میں جو دھماکہ ہوا اس میں جانی نقصان پر افسوس ہے اور پاکستان کی طرح ترکیہ بھی دہشت گردی کا شکار ہوا۔ دہشت گردی کے واقعات میں ملوث لوگ انسان دوست نہیں اور ان کا کوئی مذہب نہیں۔

یہ بھی پڑھیں: معیشت تباہ کرنے والوں کیلئے اعلان جنگ ہے، شیخ رشید

شہباز شریف نے کہا کہ دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے معاشرے کے ہر طبقے نے قربانیاں دیں اور پاکستان دہشت گردی سے نمٹنے کے لیے ترکیہ کے ساتھ کھڑا ہے۔ ترکیہ پاکستان کا دوسرا گھر ہے اور دہشت گردی کے خلاف مشترکہ حکمت عملی اپنانے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ترکیہ کا درد ایک ہے اور دونوں ممالک کے درمیان برادرانہ تعلقات ہیں۔ پاکستان میں سیلاب آیا تو ترکیہ نے ڈاکٹرز، طبی عملہ، امداد اور بنیادی ضروری اشیا بھیجیں۔ سیلاب کے دوران مشکل میں پاکستان کا ساتھ دینے پر ترکیہ کے مشکور ہیں۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ترقی کے لیے پاکستان اور ترکیہ کو مزید آگے بڑھنے کی ضرورت ہے جبکہ پاکستان اور ترکیہ کے درمیان مختلف شبعوں میں تعاون کے وسیع امکانات ہیں۔ سرمایہ کاروں کے لیے سازگار ماحول بنائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ ترکیہ سرمایہ کاروں کے تحفظات کو دور کیا جائے گا جبکہ پاکستان اور ترکیہ کے درمیان تجارت، کاروبار اور دیگر شعبوں میں مؤثر تعاون ہو گا۔ پاکستان میں گیس کی قلت اور بجلی کے مسائل ہیں جبکہ چین، ترکیہ، امریکہ اور دیگر ممالک سے توانائی کے شعبے میں تعاون جاری ہے۔

شہباز شریف نے کہا کہ پاکستان امریکہ، سعودی عرب، متحدہ عرب امارات سمیت تمام ممالک کے ساتھ کام کرنے کا خواہاں ہے اور پاکستان چاہتا ہے دنیا بھر سے تمام شعبوں میں سرمایہ کاری ہو۔ پاکستان اور ترکیہ نے تجارت کے فروغ کے لیے معاہدوں پر دستخط کیے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان اور ترکیہ کے درمیان تعلقات میں نقص کو برداشت نہیں کیا جائے گا اور گزشتہ روز صدرطیب ایردوان نے کاروبار کے قوانین کو آسان بنانے کی یقین دہانی کرائی ہے۔ بیجنگ کی طرح ترکیہ سے بھی کچھ شکایات موصول ہوئیں جن کو فوری دور کیا جائے گا کیونکہ ماضی میں ترکیہ کمپنیوں کے لیے پاکستان میں کچھ مشکلات رہی ہیں تاہم یقین دلاتا ہوں ترکیہ کے سرمایہ کاروں کی جانب سے شکایات کا ازالہ کریں گے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ روس یوکرین جنگ کی وجہ سے دنیا بھر میں مہنگائی ہوئی اور مہنگائی سے پاکستان کا ہر طبقہ اور ہر شعبہ متاثر ہوا۔ توانائی کے منصوبے کے تحت 10 ہزار میگاواٹ سولر بجلی کا پاکستان کا ہدف ہے۔

انہوں نے کہا کہ میرایقین ہے ترکیہ سرمایہ کاروں کو شمسی توانائی کے اس پروجیکٹ میں فائدہ ہو گا اور ترکیہ کمپنیوں کے سرمایہ کاروں کو پاکستان میں سرمایہ کاری کی دعوت دیتا ہوں۔ معاشرے، ممالک اور لوگوں کو زبان یا فرد نہیں بلکہ ملت اور وحدت متحد کرتی ہے جبکہ باہمی تعلقات کے لیے دونوں ممالک کے عوامی، حکومتی، سرمایہ کاری اور ہر سطح پر روابط اہم ہیں۔

شہباز شریف نے کہا کہ توانائی کے شعبے میں پاکستان کو قیمتیں بڑھانی پڑیں۔ ہم نے جنوبی پنجاب میں سولر انرجی کا منصوبہ لگایا تھا لیکن گزشتہ حکومت نے اس کی ادائیگی روک دی تھی۔ پاکستان کو آج بھی گندم اور گیس کی ضرورت ہے۔

متعلقہ خبریں